قندوز: نماز جنازہ میں خودکش حملہ، سات ہلاک

Image caption ابھی تک کسی گروپ نے حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی

افغانستان میں حکام کے مطابق صوبہ قندوز میں نمازِ جنازہ کے دوران ایک خودکش حملے میں ضلعی گورنر سمیت سات افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

حکام کے مطابق اس حملے میں قندوز کے ضلع ارچی کے گورنر شیخ سعدی، ان کے ایک محافظ اور پانچ عام شہری ہلاک اور دس زخمی ہو گئے ہیں۔

یہ دھماکہ ایک قبائلی رہنما کی مسجد میں نماز جنازہ کے دوران ہوا۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ اس علاقے کے کئی حصوں پر طالبان کا کنٹرول ہے اور یہاں شدت پسندی کے واقعات پیش آتے رہتے ہیں۔

کابل میں بی بی سی کے نامہ نگار جعفر ہاند کے مطابق ازبکستان اور تاجکستان کی سرحد سے متصل ضلع ارچی میں افغان سکیورٹی فورسز اور طالبان کے درمیان متعدد بار جھڑپیں ہو چکی ہیں۔

خیال رہے کہ افغانستان میں تعینات غیر ملکی افواج کا انخلا منصوبے کے مطابق آئندہ سال سے شروع ہونا ہے اور اس کے بعد ملک کی سکیورٹی کی ذمے داریاں افغان سکیورٹی فورسز کے پاس چلی جائیں گی۔ ماہرین افغانستان کی طرف سے امن و امان کی صورتِ حال کو برقرار رکھنے کو بڑا چیلنج قرار دے رہے ہیں۔

اسی بارے میں