شمالی افغانستان میں 27 کان کن ہلاک

Image caption افغانستان وسیع معدنی ذخائر کے حوالے سے جانا جاتا ہے

افغانستان کے شمالی صوبے سمنگان میں حکام کا کہنا ہے کہ کوئلے کی کان میں پھنسے ہوئے ستائیس کان کن ہلاک ہوگئے ہیں۔

صوبائی گورنر کے ترجمان محمد صدیق عزیزی نے بی بی سی کو بتایا کہ کان کن ابخورک نامی کوئلے کی کان میں کام کر رہے تھے جب اس کا ایک حصہ منہدم ہوگیا۔

ان کان کنوں کو نکالنے کی کوشش میں ریسکیو ٹیم کے چار ارکان بھی بری طرح زخمی ہوگئے تھے۔

صوبائی حکومت کے ایک اہلکار نے بتایا کہ امدادی ٹیم کے پاس مناسب ساز و سامان نہیں تھا۔

صوبہ سمنگان دارالحکومت کابل کے شمال میں 215 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔

افغانستان میں کان کنی کے صنعت حکومت کے کنٹرول میں ہے اور یہ پہلی بار نہیں کہ کسی کان میں حادثہ پیش آیا ہو۔

گزشتہ سال دسمبر میں شمالی صوبے بغلان میں اسی قسم کے ایک حادثے میں گیارہ کان کن ہلاک ہوگئے تھے۔

افغانستان میں تیل، گیس، تانبے اور سونے کے وسیع ذخائر موجود ہیں۔

افغانستان وسیع معدنی ذخائر کے حوالے سے بھی جانا جاتا ہے۔ سنہ دو ہزار دس میں افغانستان کی کان کنی کی وزارت نے دعویٰ کیا تھا کہ ان ذخائر کی کل مالیت تقریباً ایک کھرب ڈالر ہے۔

اسی بارے میں