مارٹن لوتھر کنگ اور محمد علی زیرِ نگرانی رہے

Image caption جن افراد کی نگرانی کی گئی ان میں سے کئی ویتنام کے مسئلے میں امریکی شمولیت کے ناقد تھے

امریکہ میں سامنے آنے والی خفیہ دستاویزات کے مطابق جنگِ ویتنام کے خلاف امریکہ میں ہونے والے مظاہروں کے دوران ملک کی قومی سلامتی کی ایجنسی نے حقوقِ انسانی کے علمبردار مارٹن لوتھر کنگ اور باکسر محمد علی کی جاسوسی کی تھی۔

ان دستاویزات کے مطابق امریکی حکام نے نیویارک ٹائمز اور واشنگٹن پوسٹ سے وابستہ صحافیوں اور دو سینیٹرز پر بھی نظر رکھی ہوئی تھی۔

دستاویزات میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ایجنسی کے کچھ افسران کے خیال میں یہ پروگرام ’اگر غیرقانونی نہیں تو پھر بھی بےعزتی کے مترداف تھا۔‘

’مینار‘ نامی یہ پروگرام پہلی بار سنہ انیس سو ستّر کی دہائی میں سامنے آیا تھا لیکن اس کے تحت جن افراد کی نگرانی کی گئی ان کے نام اب تک خفیہ رکھےگئے تھے۔

یہ دستاویزات اس وقت افشا کی گئیں جب ایک حکومتی پینل نے جارج واشنگٹن یونیورسٹی کے محققین کے حق میں فیصلہ دیا۔

یونیورسٹی کے تحقیقی ادارے نیشنل سکیورٹی آرکائیو نے زیرِ نگرانی رہنے والے افراد کی فہرست کو ’حیرت انگیز‘ قرار دیا ہے۔

اس آپریشن کے دوران ایجنسی نے حقوقِ انسانی کے کارکنوں مارٹن لوتھر کنگ، وٹنی ینگ، باکسر محمد علی، نیویارک ٹائمز کے صحافی ٹام وکر اور واشنگٹن پوسٹ کے کالم نگار آرٹ بک والڈ کی نگرانی کی۔

Image caption محمد علی کو 1967 میں ویتنام جنگ کے لیے فوجی سروس میں شرکت سے انکار پر ان کے باکسنگ ٹائٹل سے محروم کر دیا گیا تھا

اس کے علاوہ این ایس اے دو سینیٹرز ڈیموکریٹ پارٹی کے فرینک چرچ اور رپبلکن پارٹی کے ہاورڈ بیکر کی فون کالیں بھی سنیں۔

جن افراد کی نگرانی کی گئی ان میں سے کئی ویتنام کے مسئلے میں امریکی شمولیت کے ناقد تھے۔

1967 میں اس وقت کے امریکی صدر لِنڈن بی جانسن نے امریکی خفیہ اداروں سے کہا تھا کہ وہ معلوم کریں کہ آیا ویتنام جنگ کے خلاف ہونے والے مظاہرے غیر ملکی حکومتوں کی ایما پر تو نہیں ہو رہے۔

اس کے بعد قومی سلامتی کی ایجنسی نے دیگر دو اداروں سے مل کر ’نگرانی کی فہرست‘ مرتب کی اور ان افراد کے فون ٹیپ کیے۔

یہ پروگرام 1969 میں صدر نکسن کی وائٹ ہاؤس آمد کے بعد بھی جاری رہا اور پھر جب واٹر گیٹ سکینڈل سامنے آیا تو 1973 میں اس وقت کے اٹارنی جنرل ایلیٹ رچرڈسن نے اسے بند کروا دیا۔

اب اس پروگرام کے بارے میں معلومات ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہیں جب این ایس اے ایک مرتبہ پھر نگرانی کے پروگراموں کی وجہ سے تنقید کی زد پر ہے۔

اسی بارے میں