لبنان: ایرانی سفارتخانے کے قریب دھماکے، 22 ہلاک

Image caption عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ اس حملے میں متعدد قریبی عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے

اطلاعات کے مطابق لبنان کے دارالحکومت بیروت میں ایرانی سفارت خانے کے قریب دو دھماکے ہوئے ہیں جن میں 22 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

خبر رساں ادارے اے پی اور حزب اللہ کے ٹی وی چینل المنار کا کہنا ہے کہ پہلا دھماکہ ایک خودکش حملہ آور نے کیا جبکہ دوسرا دھماکہ ایک کار بم کی مدد سے کیا گیا جس سے قدرے زیادہ نقصان ہوا۔

تاہم ان اطلاعات کی سرکاری ذرائع سے تصدیق نہیں ہو سکی۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ اس حملے میں متعدد قریبی عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے۔

ایران لبنانی شیعہ مسلح گروہ حزب اللہ کا اہم حامی ہے۔

حزب اللہ نے شام میں جاری خانہ جنگی میں صدر بشار الاسد کی حکومت کی امداد کے لیے جنگجو شام بھیجے ہیں۔ شام میں جاری خانہ جنگی کی وجہ سے لبنان میں فرقہ وارانہ کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔

جنوبی بیروت حزب اللہ کا گڑھ سمجھا جاتا ہے۔ ایرانی سفارت خانہ بھی اسی علاقے میں واقع ہے۔گذشتہ چند ماہ میں اس علاقے میں متعدد حملے ہو چکے ہیں۔

خبر رساں ادارے اے پی کا کہنا ہے کہ سفارت خانے کا مرکزی گیٹ تباہ ہو گیا ہے اور تین منزلہ عمارت کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

15 اگست کو جنوبی بیروت میں ایک بم حملے میں 16 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ کہا گیا تھا کہ اس حملے کا تعلق شامی تنازعے سے ہے۔

اس سال جون میں لبنان اور شام کی سرحد کے قریب واقع قوصیر قصبے پر شامی حکومت کے قبضہ کرنے میں حزب اللہ کے جنگجوؤں نے انتہائی اہم کردار ادا کیا تھا۔

اسی بارے میں