برلن میں بھنگ فروخت کرنے کی’منظوری‘

Image caption جرمن کے ہمسایہ ملک نیدرلینڈ میں پہلے ہی سینکڑوں دوکانوں پر بھنگ دستیاب ہے

جرمنی کے شہر برلن کے کونسلرز نے شہر میں ملک کی پہلی کافی کی دوکان قائم کرنے کی منظوری دی ہے جہاں بھنگ فروخت کی جا سکے گی۔

کونسلرز کی منظوری کے بعد بھی کیفے کے قیام میں بہت سارے قانونی مسائل حائل ہیں۔

’منشیات کے خلاف جنگ ناکام ہو رہی ہے‘

فریگلنسٹان فوزداگ کونسل کے زیادہ تر کونسلز نے کیفے کے حق میں ووٹ دیا ہے تاکہ شہر میں منشیات کی غیر قانونی فروخت کو روکا جا سکے۔

جرمنی کے اخبار Sueddeutsche Zeitung daily کے مطابق ڈائریکٹر میئر مونیکا ہرمین کا کہنا ہے کہ کئی دہائیوں سے نافذ منشیات سے متعلق’ممنوعہ پالیسی‘ ناکام ہو چکی ہے اور اب ہمیں اس کے غیر روایتی حل پر سوچنا چاہیے۔

جرمنی میں منشیات کا استعمال غیر قانونی ہے لیکن بعض معاملات جیسا کہ طب یا عوامی مفادات سے متعلق دیگر مقاصد اس پابندی سے مستثنیٰ ہیں۔

برلن ڈسٹرکٹ بظاہر اسی نرمی کو جواز بنا کر کیفے کھولنے کی اجازت دے گا لیکن اخبار نے خبردار کیا ہے کہ اب بھی کئی قانونی پہلوؤں حل طلب ہیں۔

جن میں اس بات کا تعین کرنا باقی ہے کہ اس کیفے کو چلانے والا کون ہو گا اور یہاں سے نشہ آور بھنگ کون خرید سکتا ہے۔

جرمنی کے ہمسایہ ملک نیدرلینڈ میں کافی کی ایسی سینکڑوں دوکانیں قائم ہیں جہاں سے محدود مقدار میں نشہ آور بھنگ خریدی جا سکتی ہے۔

اسی بارے میں