منڈیلا کا آخری سفر اختتامی مرحلے میں

Image caption جنوبی افریقہ کے سابق صدر نیلسن منڈیلا کے جسد خاکی کی دیدار کے لیے کم از کم ایک لاکھ لوگ پہنچے

جنوبی افریقہ کے آنجہانی سابق صدر نیلسن منڈیلا کی جسدِ خاکی اپنی آخری آرام گاہ کی جانب سفر کے اختتامی مرحلے میں ان کے آبائی گاؤں کونو کے لیے روانہ ہوگئی ہے۔

ان کی کی میّت والے تابوت کے ساتھ ان کے قبیلے کے اہم اراکین اور خاندان کے لوگ سفر کر رہے ہیں۔ تابوت کی متھا تھا ہوائی اڈّے پر آمد پر اسے فوجی گارڈ آف آنر دیا گیا۔ اب کونو کی جانب یہ تابوت گاڑی کے ذریعے سفر کرے گا۔

کونو میں مقامی افراد کو دعوت دی گئی ہے کہ وہ اس عظیم رہنما کو عقیدت پیش کرنے کے لیے تابوت کے لیے تعین شدہ راستے کی دونوں جانب جمع ہو جائیں۔

گذشتہ تین دنوں کے دوران جنوبی افریقہ کے سابق صدر نیلسن منڈیلا کے جسد خاکی کی دیدار کے لیے کم از کم ایک لاکھ لوگ پہنچے۔

ان کی نعش کو پریٹوریا میں دیدار عام کے لیے رکھا گیا تھا۔ لمبی قطار کی وجہ سے بہت سے لوگ ان کے آخری دیدار سے محروم بھی رہ گئے۔

نیلسن منڈیلا کا پانچ دسمبر کو 95 سال کی عمر میں انتقال ہوا۔

Image caption بہت سے لوگ اس بات سے ناراض ہیں کہ زیارت کے لیے زیادہ وقت کیوں نہیں رکھا گیا

دو لڑاکہ طیاروں کی نگرانی میں ایک فوجی سی ون 30 طیارہ میّت کو لے کر متھا تھا ہوائی اڈّے پر پہنچا تو سوگوار موسیقی کی آواز میں جنوبی افریقی جھنڈے میں لپٹے تابوت کو جہاز سے اتارا گیا اور فوجی گارڈ آف آنر دیا گیا۔

اتوار کے روز تدفین اور سرکاری سطح کی آخری رسومات سے قبل تابوت کو کونو میں تھیمبوئی کے شاہی گھر میں رکھا جائے گا۔

تھیمبوئی برادری آخری رسومات کے سلسلے میں ایک رواتیت تقریب کا انعقاد کرے گی جس کے لیے ایک سفید مارکی لگائی گئی ہے۔

آخری رسومات میں تقریباً چار ہزار افراد شریک ہوں گے جن میں افریقی ممالک کے صدور، متعدد وزرائے اعظم، ایرانی نائب صدر اور پرنس آف ویلز شامل ہوں گے۔

Image caption منڈیلا کی دعایہ تقریب میں شامل ہونے کے لیے دنیا بھر سے اہم شخصیات جمع ہوئی تھیں

واضح رہے کہ جمعہ کو جنوبی افریقی حکومت نے کہا تھا کہ تیسرے دن تقریباً 50 ہزار افراد ملک میں جمہوری طریقے سے منتخب پہلے صدر کو اظہار عقیدت پیش کرنے آئے۔

ایک پولیس اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا ’یہاں بہت سارے لوگ آ رہے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ جنوبی افریقہ کے تمام لوگ انھیں الوداع کہنا چاہتے ہیں۔‘

بعض لوگوں کو نیلسن منڈیلا کے جسد خاکی کو 11 گھنٹے تک قطار میں لگے رہنے کے بعد ہی دیکھنے کا موقعہ مل سکا۔

متعدد افراد اس بات سے بھی ناراض ہیں کہ انھیں آخری رسومات کے لیے مزید وقت کیوں نہیں دیا گيا تاہم کچھ کا کہنا ہےکہ اگرچہ وہ ان کی میّت کا آخری دیدار نہیں کرسکے لیکن یہ کیا کم ہے کہ وہ اس موقعے سے وہاں موجود تھے۔

اسی بارے میں