پراگ: فلسطینی سفارت کار دھماکے میں ہلاک

Image caption جمال الجمال جمہوریہ چیک میں واقع فلسطینی مشن کے سربراہ کے طور پر تعینات تھے

جمہوریہ چیک کے دارالحکومت پراگ میں فلسطینی سفارت خانے میں ہونے والے ایک دھماکے میں ایک سفارتکار ہلاک ہو گئے ہیں۔

جمہوریہ چیک میں واقع فلسطینی مشن کے سربراہ جمال الجمال کے گھر میں یہ دھماکہ اس وقت ہوا جب انہوں نے ایک سیف کو کھولنے کی کوشش کی۔

پولیس نے اس واقعے کو بظاہر ایک حادثہ قرار دیا ہے۔

جمال الجمال اس دھماکے کے نتیجے میں زخمی ہوئے اور چار گھنٹے کے بعد کے پراگ کے فوجی ہسپتال میں انتقال کر گئے۔

حکام کے مطابق یہ حادثہ اس وقت ہوا جب مسٹر جمال نے اپنے گھر میں واقع ایک سیف کو کھولنے کی کوشش کی جو گزشتہ بیس سال سے زیادہ عرصے سے سے بند پڑا تھا۔

چیک پولیس کا کہنا ہے دھماکہ شاید اس سیف میں لگائے گئے حفاظتی آلے کے پھٹنے سے ہوا۔

فلسطینی وزیرخارجہ ریاض ملکی نے اے پی کو بتایا کہ ’یہ سیف سفارت خانے کے پرانے حصے میں کئی سالوں سے بند پڑا تھا اور اسے بیس سے پچیس سال کے دوران کسی نے بھی ہاتھ نہیں لگایا تھا۔‘

مسٹر جمال کی باون سالہ اہلیہ کو صدمے کے نتیجے میں ہسپتال لیجایا گیا۔

مسٹر جمال حال ہی میں اس دو منزلہ عمارت میں منتقل ہوئے تھے اور فلسطینی حکام کے مطابق اس سیف کو ایک پرانی عمارت سے اس نئی عمارت میں منتقل کیا گیا تھا۔

اگر باہر گلی سے دیکھا جائے تو عمارت کو بظاہر کوئی نقصان نہیں پہنچا ہے۔

فلسطینی وزارتِ خارجہ نے کہا ہے کہ وہ ایک وفد چیک حکام کے ساتھ تفتیش میں تعاون کے لیے بھجوا رہے ہیں۔

فلسطینی آزادی کی تنظیم پی ایل او جسے اقوامِ متحدہ اور اسرائیل فلسطینیوں کے حقیقی نمائندے کے طور پر تسلیم کرتے ہیں کے سفارت کار یورپی اور دوسرے دارالحکومتوں میں تعینات ہیں اور اس کا ایک مشن پراگ میں بھی ہے۔