صومالیہ: کار بم دھماکوں میں 8 افراد ہلاک

Image caption صومالی اسلام پسند گروہ الشباب نے اس حملے کی زمہ داری قبول کی ہے

افریقی ملک صومالیہ کے دارالحکومت موغادیشو میں دو کار بم دھماکوں کے نتیجے میں آٹھ افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہو گئے ہیں۔

یہ دھماکے موغادیشو کے ہوائی اڈے کے قریب واقع جزیرہ ہوٹل میں ہوئے جو صومالی سیاستدانوں کا مقبول ٹھکانہ ہے۔

اطلاعات کے مطابق ان دھماکوں کے بعد سکیورٹی حکام اور حملہ آوروں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا۔

صومالی اسلام پسند گروہ الشباب نے اس حملے کی زمہ داری قبول کی ہے۔

القاعدہ سے منسلک اس گروہ کے قبضے میں اب بھی ملک کے کئی جنوبی اور مرکزی حصے ہیں اور انہیں دارلحکومت سے باہر تو نکالا گیا مگر اب بھی دارالحکومت پر ان کے حملے ہوتے رہتے ہیں۔

ایک مقامی عبداللہ حسینی شہری نے روئٹرز کو بتایا کہ ’پہلے ہم نے ایک زوردار دھماکے کی آواز سنی اور پھر سکیورٹی والوں نے فائرنگ شروع کر دی۔‘

انہوں نے مزید بتایا کہ ’چند منٹوں کے بعد ایک اور دھماکہ ہوا اور اس کے بعد مزید فائرنگ ہوئی۔‘

Image caption جزیرہ ہوٹل پر دسمبر 2012 میں اس وقت حملہ کیا گیا جب اس میں صدر حسن شیخ محمود قیام پذیر تھے

نائب وزیرِ داخلہ نے بی بی سی صومالی سروس سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ اس دھماکے میں سکیورٹی کے چار اہلکار ہلاک ہوئے جن میں ایک اعلیٰ اہلکار بھی تھا۔

پولیس اہلکار محمد ورسیم نے اے ایف پی کو بتایا کہ دوسرا دھماکہ تب ہوا جب سکیورٹی اہلکار پہلے دھماکے سے متاثر ہونے والے افراد کی مدد کر رہے تھے۔

جزیرہ ہوٹل پر دسمبر 2012 میں اس وقت حملہ کیا گیا جب اس میں صدر حسن شیخ محمود قیام پذیر تھے۔ اس حملے میں سات افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

گزشتہ ہفتے ایک ریستوران میں ریورٹ کنٹرول بم کے دھماکے سے گیار افراد ہلاک ہو گئے تھے جن میں چھ فوجی بھی شامل تھے۔

متعلقہ انٹرنیٹ لنکس

بی بی سی بیرونی ویب سائٹس کے مواد کا ذمہ دار نہیں