بغداد: بم دھماکوں کی لہر، 33 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption شہر کے کاروباری مرکز خلانی سکوئر میں بھی ایک کار بم حملہ ہوا

عراق میں حکام کا کہنا ہے کہ بدھ کے روز دارالحکومت بغداد میں متعدد بم حملوں میں 33 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

شہر میں سخت سکیورٹی کے انتظامات والی گرین زون کے قریب ہی موجود وزارتِ خارجہ کی عمارت کے باہر دو کار بم دھماکے ہوئے ہیں۔

اس کے علاوہ شہر کے کاروباری مرکز خلانی سکوئر میں بھی ایک کار بم حملہ ہوا ہے۔

شہر کے جنوب مشرقی علاقے میں بھی تین بم دھماکوں کی اطلاعات ہیں۔

عراق میں گذشتہ ایک سال کے دوران فرقہ وارانہ فسادات میں شدید تیزی دیکھی گئی ہے۔

عراقی حکومت کا کہنا ہے کہ صرف جنوری کے مہینے میں ایک ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں جو کہ گذشتہ چھ سالوں میں کسی ایک ماہ میں ہلاکتوں کی سب سے زیادہ تعداد ہے۔

بدھ کے روز ہونے والے بم حملوں کی ابھی تک کسی نے ذمہ داری قبول نہیں کی ہے تاہم ملک میں القاعدہ سے منسلک سنی جنگجو شیعہ حکومت کے خلاف کارروائیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔

عراق میں اقوام متحدہ کے مندوب نکولے لادنوو نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’عراق کی سیاسی قیادت کو قومی یکجہتی کا مظاہرہ کرنا چاہیے اور دہشتگردی کے خلاف متحد ہو جانا چاہیے۔‘

منگل کے روز بھی بم حملوں کی ایک لہر میں سات افراد ہلاک ہوئے تھے اور گرین زون کے اندر دو راکٹ حملے ہوئے تھے۔

بغداد میں گرین زون میں عراقی پارلیمنٹ، حکومتی عمارتیں اور چند سفارتخانے ہیں۔

اس سے قبل پیر کے روز دارالحکومت اور نواحی علاقوں میں ہونے والے بم حملوں میں 23 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

گذشتہ اختتامِ ہفتہ پر سکیورٹی حکام کی جانب سے فلوجہ پر ایک بار پھر قبضہ کرنے کے لیے اہم کارروائی کی گئی تاہم پیر کو شہر میں موجود ایک صحافی نے بتایا کہ شہر قدرے خاموش ہی تھا۔

اس کے علاوہ خبر رساں ادارے اے پی کا کہنا ہے کہ رمادی میں بھی فوج، پولیس اور حکومت حامی جنگجو شدت پسندوں کے خلاف آپریشن میں شریک ہیں۔

اسی بارے میں