مرسی کی پنجرے میں پیشی پر وکلا کا احتجاج

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption حالیہ پیشیوں میں محمد مرسی کو شیشے کے ایک پنجرے میں پیش کیا جاتا رہا ہے

مصر کے دارالحکومت قاہرہ کی عدالت میں معزول صدر محمد مُرسی کے خلاف جاسوسی اور دہشتگردی کی سازش کے الزامات کے تحت مقدمے کی کارروائی ملتوی کر دی گئی ہے۔

مرسی کو ان مقدمات کی سماعت کے لیے اتوار کی صبح ہیلی کاپٹر کے ذریعے اسکندریہ کی برج العرب جیل سے قاہرہ لایا گیا تھا۔

تاہم ججوں نے سماعت ملتوی کرنے کا فیصلہ اُس وقت کیا جب محمد مُرسی کے وکلا احتجاجاً عدالت سے اِس لیے واک آؤٹ کر گئے کہ اُن کے موکل سمیت دیگر ملزمان کو شیشے کے ایسے ڈبے میں رکھا گیا ہے جس سے اُن کی آواز بھی باہر نہیں سنی جا سکتی۔

عدالت نے کہا ہے کہ وہ محمد مرسی کے لیے نئے وکیل صفائی کا بندوبست کرے گی۔ عدالت نے مقدمے کی سماعت کی نئی تاریخ 23 فروری مقرر کی ہے۔

وکلائے صفائی کا کہنا تھا کہ ان کے موکل عدالتی کارروائی میں شریک نہیں ہو سکتے تاہم جج نے اصرار کیا کہ انھیں اس کے لیے پنجرے میں ہیڈفون کی سہولت دی گئی ہے۔

معزول مصری صدر کو سماعت کے دوران ان کے باآوازِ بلند بات کرنے اور عدالتی کارروائی میں خلل ڈالنے کی وجہ سے حالیہ پیشیوں میں شیشے کے ایک پنجرے میں پیش کیا جاتا رہا ہے۔

مصر کے پہلے آزادانہ طور پر منتخب صدر محمد مرسی کو جولائی 2013 میں فوج نے ایک بغاوت میں برطرف کر دیا تھا۔

اب ان کے خلاف مختلف الزامات کے تحت چار مقدمے چلائے جا رہے ہیں اور اتوار کو زیرِ سماعت مقدمے میں محمد مُرسی اور مصر کی اسلام پسند تنظیم اخوان المسلمین کے 35 ارکان پر مصر کی سرزمین پر حملے کرنے کے لیے غیر ملکی طاقتوں کے ساتھ تعاون کرنے کا بھی الزام ہے۔

مقدمے کے مطابق بیرونی طاقتوں سے مراد فلسطین کی تحریک حماس، لبنان کی حزب اللہ اور ایران کی پاسدارانِ انقلاب ہیں۔

اگر محمد مرسی پر یہ الزام ثابت ہو جاتا ہے تو اُنہیں سزائے موت دی جا سکتی ہے تاہم اخوان المسلمین کے تین ملزمان کے وکیل عبدالرب النبی کا کہنا ہے کہ یہ سب مقدمات سیاسی انتقام کی بنیاد پر قائم کیے گئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ’میں سمجھتا ہوں کہ یہ سیاسی مقدمہ ہے۔ اِس مقدمےکو پڑھنے کے بعد میں کوئی جرم یا مجرمانہ عمل نہیں ڈھونڈ پایا۔ یہ مقدمہ اخبارات، فون کالز اور ای میلز کی بنیاد پر قائم کیا گیا ہے۔‘

حقوق انسانی کی تنظیموں نے بھی محمد مرسی کے خلاف بعض الزامات کو عقل کے منافی قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا ہے۔

اسی بارے میں