کرائمیا کا ریفرینڈم غیرقانونی تھا:جنرل اسمبلی

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption قرارداد کے حق میں ایک سو ممالک نے ووٹ دیا جبکہ اس کی مخالفت میں 11 ووٹ آئے

اقوامِ متحدہ کی جنرل اسمبلی نے کرائمیا میں ہونے والے اس ریفرینڈم کو غیرقانونی قرار دینے کی قرارداد منظور کر لی ہے جس میں کرائمیا کے روس سے الحاق کی منظوری دی گئی تھی۔

یوکرین کے جنوبی جزیرہ نما خطے کرائمیا کو روسی فیڈریشن کا حصہ بنائے جانے پر روس اور دیگر عالمی طاقتوں کے تعلقات اس وقت کشیدہ ہیں۔

مغربی ممالک نے روس کے اس فیصلے کی مذمت کی ہے اور بدھ کو ہی امریکی صدر براک اوباما نے روس کو خبردار کیا ہے کہ اگر اس نے یوکرین کی خود مختاری کی خلاف ورزی کا سلسلہ جاری رکھا تو اسے نئی پابندیوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔

جنرل اسمبلی میں جمعرات کو پیش کی جانے والی قرارداد کے حق میں ایک سو ممالک نے ووٹ دیا جبکہ اس کی مخالفت میں 11 ووٹ آئے جبکہ 58 ممالک نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔

ووٹنگ کے بعد یوکرین کے وزیرِ خارجہ آندرے ڈیشچتسیا نے کہا کہ ’دنیا کے تمام کونوں سے یہ حمایت ملی ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ کوئی علاقائی نہیں بلکہ عالمی معاملہ ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ non
Image caption آئی ایم ایف کا قرض یوکرین کی معیشت کو سنبھالنے کے سلسلے میں اہم پیشرفت ہے:اوباما

تاہم اقوامِ متحدہ میں روس کے مندوب ویٹالی چورکن کا کہنا تھا کہ ’یہ حقیقت کہ جنرل اسمبلی کے تقریباً نصف ارکان نے اس قرارداد کی حمایت نہیں کی، بہت حوصلہ افزا رجحان ہے اور میرے خیال میں یہ رجحان مضبوط سے مضبوط تر ہوتا جائے گا۔‘

نیویارک میں بی بی سی کے نک برائنٹ کے مطابق چونکہ اس قرارداد کے نتائج پر عملدرآمد لازمی نہیں اس لیے اس کی حیثیت علامتی ہی ہے تاہم یوکرین کو امید ہے کہ یہ قرارداد ایک رکاوٹ کا کام کرے گی اور روس کو اس کے مزید علاقوں میں دخل اندازی سے روکے گی۔

ادھر عالمی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف نے یوکرین کو 14 سے 18 ارب ڈالر بطور قرض دینے کی منظوری دے دی ہے۔

امریکہ کے صدر براک اوباما نے اس فیصلے کا خیرمقدم کیا ہے اور کہا ہے کہ یہ یوکرین کی معیشت کو سنبھالنے اور اس کے عوام کی ضروریات پوری کرنے کے سلسلے میں اہم پیشرفت ہے۔

خیال رہے کہ یوکرین نے عبوری وزیراعظم آرسینی یتسینیوک نے پارلیمان کو بتایا تھا کہ ملک ’اقتصادی اور مالیاتی دیوالیہ پن‘ کے دہانے پر پہنچ چکا ہے۔

اسی بارے میں