’ایم ایچ 370 کی تلاش اب نئے مرحلے میں داخل ہو رہی ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آبدوز بلیو فن 21 پانی کے اندر چلنے والی گاڑی ہے جو سمندر کے فرش کا نقشہ بنا کر مختلف اشیا کی شناخت کر سکتی ہے

آسٹریلیا نے اعلان کیا ہے کہ ملائیشیا کے لاپتہ مسافر طیارے کی تلاش کا عمل ایک نئے مرحلے میں داخل ہو رہا ہے۔ ابتدائی طور پر سمندر میں زیرِ آب تلاش کے دوران طیارے کا کوئی کھوج نہیں مل سکا۔

آسٹریلوی وزیرِاعظم ٹونی ایبٹ کا کہنا ہے کہ اب سمندر کی تہہ میں اب ایک ’وسیع علاقے‘ میں تلاش کی جائے گی۔

تاہم ان کا کہنا تھا کہ اس بات کا امکان کم ہے کہ سمندر کی سطح پر طیارے کے ٹکڑے ملیں۔

کوالالمپور سے بیجنگ جانے والا یہ مسافر بردار طیارہ آٹھ مارچ کو لاپتہ ہو گیا تھا اور اس پر 239 افراد سوار تھے، جن میں سے بیشتر چینی باشندے تھے۔

سیٹلائٹ معلومات کی بنیاد پر حکام کا خیال ہے کہ مسافر طیارہ اپنے متعین راستے سے بھٹک کر بہت دور بحرِ ہند کے جنوبی حصّے میں سمندر میں گر گیا تھا۔

تلاش کے عمل میں مصروف حکام کا کہنا ہے کہ لاپتہ طیارے کا بلیک باکس ملنے کی امیدیں کم ہوتی جا رہی ہیں کیونکہ بلیک باکس کی بیٹری عام طور پر صرف ایک ماہ تک کام کر سکتی ہے اور یہ مدت پوری ہو چکی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption آسٹریلوی وزیرِاعظم ٹونی ایبٹ کا کہنا ہے کہ اب سمندر کی تہہ میں اب ایک ’وسیع علاقے‘ میں تلاش کی جائے گی

تفتیش کاروں کو ابھی تک یہ معلوم نہیں ہوا کہ ایم ایچ 370 ملائیشیا اور ویت نام کے درمیان بحیرۂ جنوبی چین کی حدود میں لاپتہ ہونے کے بعد اپنے متعین راستے سے اتنا دور کیوں چلی گئی تھی۔

آسٹریلوی دارالحکومت کینبرا میں نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے آسٹریلوی وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ’ایم ایچ 370 کو لاپتہ ہوئے 52 دن گزر چکے ہیں اور میں آپ کو اطلاع دینا چاہتا ہوں کہ اس کی تلاش اب نئے مرحلے میں داخل ہو رہی ہے۔‘

انھوں نے کہا کہ اب تک طیارے کے تمام ٹکڑے پانی میں ڈوب چکے ہوں گے اس لیے تلاش کے عمل میں سمندر کی تہہ پر ایک بہت بڑے علاقے کو توجہ دی جائے گی۔

اب تک آبدوز بلیو فن 21 سمندر کی تہہ میں اس صوتی سگنل کو تلاش کر رہی ہے جو آٹھ اپریل کو ملا تھا اور جس کے بارے میں خیال کیا گیا تھا کہ وہ ایم ایچ 370 کا ہی ہے۔

امریکی بحریہ کی طرف سے چلائی جانے والی آبدوز بلیو فن 21 پانی کے اندر چلنے والی گاڑی ہے جو سمندر کے فرش کا نقشہ بنا کر مختلف اشیا کی شناخت کر سکتی ہے۔ یہ گاڑی چار ہزار میٹر (13 ہزار فٹ) گہرائی میں کام کر رہی ہے۔

مختلف ممالک کے طیارے اور بحری جہاز سمندر میں ایم ایچ 270 کے کسی بھی قسم کے شواہد تلاش کرنے میں مصروف ہیں تاہم اب تک کوئی سراغ نہیں ملا۔

اسی بارے میں