یومِ مزدور پر ترکی میں مظاہرے

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption جلوس نکالنے کی کوشش کرنے والے افراد نے پولیس پر پتھراؤ کیا اور پٹاخے پھینکے

ترکی کے شہر استنبول میں پولیس نے عالمی یومِ مزدور کے موقعے پر جلوس نکالنے والے افراد کو منتشر کرنے کے لیے آنسوگیس اور پانی کی تیز بوچھاڑ کا استعمال کیا ہے۔

یہ افراد جمعرات کو شہر کے تقسیم چوک میں جمع ہوئے تھے جو حکومت مخالف مظاہروں کا مرکز رہا ہے۔

ترکی میں حکومت نے مظاہروں اور جلسے جلوسوں پر پابندی عائد کر رکھی ہے اور امریکی خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کا کہنا ہے کہ مزدوروں کے عالمی دن کے موقعے پر ہزاروں افراد استنبول میں مختلف مقامات پر جمع ہوئے ہیں۔

مقامی ٹی وی پر دکھائی جانے والی فوٹیج میں تقسیم چوک میں پرچم لہراتے مظاہرین کی پولیس اہلکاروں سے جھڑپیں دیکھی جا سکتی ہیں۔

جمعرات کو اس علاقے میں جلوس نکالنے کی کوشش کرنے والے افراد نے پولیس پر پتھراؤ کیا اور پٹاخے پھینکے جبکہ پولیس نے انھیں منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس اور پانی کی تیز دھار کا استعمال کیا۔

ترک ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ مظاہروں کو روکنے کے لیے 40 ہزار کے قریب پولیس اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption مظاہروں کو روکنے کے لیے 40 ہزار کے قریب پولیس اہلکار تعینات کیے گئے

وزیراعظم رجب طیب اردوغان نے پہلے ہی عوام کو خبردار کیا تھا کہ وہ تقسیم سکوائر میں جمع ہونے کی ’امید چھوڑ دیں۔‘

تاہم ملک کی تاجر یونینوں نے بدھ کو ایک مشترکہ بیان میں کہا تھا کہ ’ہم غیرقانونی پابندی کے باوجود تقسیم چوک میں جمع ہوں گے۔ یومِ مئی پر سب راستے اسی جانب ہی جائیں گے۔‘

وزیراعظم اردوغان کی جماعت نے رواں برس مارچ میں ہونے والے مقامی انتخابات جیتے ہیں۔ یہ ان کی حکومت کے خلاف گذشتہ جون میں ہونے والے بڑے مظاہروں کے بعد پہلے الیکشن تھے اور انھیں ان کی مقبولیت کا پیمانہ قرار دیا جا رہا تھا۔

رجب طیب اردوغان اگست میں ملک کے صدر کا انتخاب لڑنے کا ارادہ رکھتے ہیں اور یہ پہلا موقع ہوگا کہ ترک عوام براہِ راست ریاست کے سربراہ کا انتخاب کریں گے۔

اسی بارے میں