’جیت گیا تو اخوان المسلمین کا وجود نہیں رہے گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption عبدالفتاح السیسی کے مخالف انھیں ملک میں بڑے پیمانے پر حقوقِ انسانی کی خلاف ورزیوں کے لیے ذمہ دار گردانتے ہیں

مصر میں فوج کے سابق سربراہ اور صدارتی انتخاب کے مضبوط امیدوار عبدالفتاح السیسی نے کہا ہے کہ وہ انتخاب جیت گئے تو ملک میں معزول صدر محمد مرسی کی سیاسی جماعت اخوان المسلمین کا ’وجود‘ نہیں رہے گا۔

عبدالفتاح السیسی نے صدارتی انتخاب کی مہم میں مصری ٹی وی چینل کو اپنے پہلے انٹرویو میں کہا کہ ان کو قتل کرنے کے دو منصوبوں کا سراغ لگایا جا چکا ہے۔

فیلڈ مارشل السیسی نے جولائی 2013 میں عوامی مظاہروں کے بعد منتخب صدر محمد مرسی کی حکومت کا تختہ الٹ دیا تھا۔

انھوں نے کہا کہ مصری عوام اخوان المسلمین کو مسترد کر چکے ہیں اور وہ کبھی اقتدار میں واپس نہیں آئے گی۔

عبدالفتاح السیسی نےاس بات سے انکار کیا کہ جب گذشتہ سال محمد مرسی کو اقتدار سے الگ کیا تو اس وقت ان کے سیاسی عزائم تھے۔

انھوں نے کہا کہ جس کسی کو ملک کے تحفظ، اس کے عوام اور ان کے مستقبل کو بچانے کا موقع ملتا تو اسے آگے آنا چاہیے تھا۔

عبدالفتاح السیسی نے صدارتی انتخاب میں فوج کا امیدوار ہونے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ فوج کا حکومت سے کوئی تعلق نہیں ہو گا۔

انھوں نے ملک میں مظاہروں کے حق پر سخت پابندیوں کے قانون کا بھی دفاع کیا۔

مارچ میں عبدالفتاح السیسی نے صدارتی انتخاب میں حصہ لینے کے لیے اپنے عہدے سے استعفیٰ دیا تھا۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ رواں ماہ کی 26 اور 27 تاریخ کو منعقد ہونے والے انتخابات میں ان کی کامیابی کے قومی امکانات ہیں۔

فیلڈ مارشل السیسی نے جولائی 2013 میں عوامی مظاہروں کے بعد ملک کے منتخب صدر محمد مرسی کی حکومت کا تختہ الٹ دیا تھا۔

Image caption معزول صدر محمد مرسی نے عبدالفتاح السیسی کو اگست 2012 میں ملک کا وزیرِ دفاع اور فوج کا سربراہ مقرر کیا تھا

عبدالفتاح السیسی کے مخالف انھیں ملک میں بڑے پیمانے پر حقوقِ انسانی کی خلاف ورزیوں کے لیے ذمہ دار گردانتے ہیں اور انھیں خدشہ ہے کہ السیسی کے صدر بننے کی صورت میں ملک سے حسنی مبارک کی حکومت کے خاتمے کے صرف تین برس بعد ایک اور مطلق العنان حکومت قائم ہو جائے گی۔

مصر کے معزول صدر محمد مرسی نے عبدالفتاح السیسی کو اگست 2012 میں ملک کا وزیرِ دفاع اور فوج کا سربراہ مقرر کیا تھا۔

تاہم صدر مرسی سے مستعفی ہونے کے مطالبے پر عوامی مظاہروں کے بعد فیلڈ مارشل السیسی نے انھیں الٹی میٹم دیا تھا کہ وہ عوامی خواہش کا احترام کریں ورنہ فوجی مداخلت کے لیے تیار رہیں۔

محمد مرسی کے مستعفی ہونے سے انکار پر عبدالفتاح السیسی نے آئین معطل کرتے ہوئے ملک میں عبوری حکومت قائم کر دی تھی۔

گذشتہ ماہ ہی مصر کی ایک عدالت نے اخوان المسلمین کے رہنما محمد بدیع سمیت 683 افراد کو سزائے موت سنائی ہے۔

یہ سزائیں معزول صدر مرسی کے بعد ملک میں بحرانی صورت حال پیدا ہونے اور کشیدگی کے نتیجے میں بڑی تعداد میں ہلاکتوں کے مقدمے میں سنائی گئی ہیں۔ اس سے پہلے اخوان المسلمین کو دہشت گرد تنظیم قرار دیا جا چکا ہے۔

اسی بارے میں