یہودیوں کی مخالفت میں ایرانی سب سے پیچھے

یہودی مخالفت تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption اسرائیل کے شدید ترین دشمن خیال کیے جانے کے باوجود جائزے میں یہودی مخالف ایرانیوں کی تعداد کم ہے

مشرقِ وسطیٰ اور شمالی افریقہ میں یہود مخالفت کے بارے میں ایک عالمی تنظیم کے حالیہ جائزے سے یہ نتیجہ سامنے آیا ہے کہ یہود مخالفت میں ایرانی سب سے پیچھے ہیں۔ اس نتیجے کو عام تصور کے برخلاف اور حیران کن تصور کیا جا رہا ہے۔

اینٹی ڈیفیمیشن لیگ (اے ڈی ایل) یا ہتکِ عزت مخالف لیگ نامی تنظیم کے اس جائزے کے مطابق صرف 56 فیصدایرانی یہودیوں کے خلاف رائے رکھتے ہیں جب کہ ترکی میں اس رائے کاتناسب 69 فیصد اور فلسطینی علاقوں میں 93 فیصد ہے۔

سرکاری طور پر قدامت پرست ایران خود کو یہودی مخالف قرار دینے کی بجائے اسرائیل مخالف کہتا ہے۔ اگرچہ ایران کے بیشتر ادارے جو ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کے ساتھیوں کے ماتحت ہیں، یہودی مخالف پروپیگنڈا کرتے رہتے ہیں۔

مثال کے طور پر ایرانی سرکاری ٹیلی ویژن اور ذرائع ابلاغ کے دوسرے روایت پسند ادارے مرگِ انبوہ یا ہولوکوسٹ کو گھٹا کر ہی پیش کرتے ہیں، دنیا کو درپیش بیشتر مسائل کا ذمے دار ’بااثر‘ یہودیوں کو قرار دیتے ہیں اور ان کی ایسی تصویر پیش کرتے ہیں جو یہود مخالفت پر مبنی ہوتی ہے۔

ایران کے موجودہ صدر حسن روحانی کے پیش رو محمد احمدی نژاد مرگ انبوہ کو اسرائیل کے خلاف سیاسی حربے کے طور پر استعمال کرتے تھے۔ وہ اسرائیل کو ایران کا سب سے بڑا دشمن قرار دیتے تھے اور کہتے تھے کہ اسرائیل ایران کو عالمی ہمدردیاں بٹورنے کے لیے استعمال کرتا ہے۔

دوسری جنگِ عظیم کے دوران نازیوں کے ہاتھوں 60 لاکھ یہودیوں کو ہلاک کیا گیا، اسی بنا پر اسے ہولوکاسٹ یا مرگِ انبوہ کہا جاتا ہے۔

چھ مئی کو ایران میں سخت گیر موقف رکھنے والے ارکانِ پارلیمنٹ نے ایرانی وزیرِ خارجہ جاوید ظریف کو اس بنا پر کڑی تنقید کا نشانہ بنایا کہ انھوں نے جرمنی کے ایک ٹیلی ویژن کو انٹرویو دیتے ہوئے مرگ انبوہ کو ایک ’سانحہ‘ قرار دیا تھا۔

اس کے علاوہ سخت گیر موقف رکھنے والوں پر تنقید کرنے والے ایرانیوں کی بھی کسی وجہ سے اسرائیلی حکومت کے بارے میں رائے منفی ہی ہے۔

مثال کے طور پر وہ فلسطینیوں اور ایران کے جوہری پروگرام کے بارے میں اسرائیلی پالیسیوں سے اختلاف کرتے ہیں۔

ایرانی نوجوان جو ایرانی سخت گیروں کے حامی نہیں ہیں گذشتہ سال اسرائیلی وزیر اعظم بن یامین نتن یاہو کے اُس تبصرے کا مذاق اڑانے میں پیچھے نہیں رہے جس میں انھوں نے کہا تھا کہ ایرانیوں کو جین پہننے یا مغربی موسیقی سننے کی اجازت نہیں۔

ایرانی نوجوانوں نے سوشل میڈیا پر جین میں اپنی تصویریں لگائیں اور نتن یاہو کے بارے میں کہا کہ وہ ایسے معاملے پر بھی تبصرے کرتے ہیں جس کے بارے میں انھیں کچھ معلوم نہیں ہے۔

ان تمام باتوں کے باوجود اے ڈی ایل کا جائزہ یہ ظاہر کرتا ہے کہ ایرانی آبادی کا بڑا حصہ ایرانی سخت گیر قیادت کے ان منفی خیالات سے متاثر نہیں ہے جو وہ یہودیوں کے بارے میں رکھتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption ایران میں اسرائیل کو ایسی قوت دکھایا جاتا ہے وہ دنیا میں بالا دستی حاصل کرنا چاہتی ہے

اس کا ایک نتیجہ یہ بھی نکالا جا سکتا ہے کہ سخت گیر موقف رکھنے والے حکمرانوں پر اعتماد نہ رکھنے کی وجہ سے ایران کی مذکورہ تعداد یہودیوں کے بارے میں ان کے خیالات سمیت ان کی ہر بات کو ناپسند کرتی ہے۔

لیکن ایک اور پہلو یہ بھی ہے کہ ایرانیوں نے بہت کم شرح میں اس بیان سے اتفاق کیا ہے کہ ’یہودیوں کے ساتھ مرگِ انبوہ میں جو کچھ ہوا، وہ اب بھی اس کے بارے میں بہت زیادہ بات کرتے ہیں۔‘

اسلامی جمہوریہ ایران میں جہاں برسرِ اقتدار طبقہ ایک عرصہ سے مرگِ انبوہ کی تردید کر رہا ہے، وہیں صرف 18 ایرانی اس بیان سے اتفاق کرتے ہیں۔

یہ عدد اس صورت میں اور بھی اہم ہو جاتا ہے جب اسے مذکورہ بیان سے اتفاق کرنے والے 22 فیصد امریکیوں سے ملا کر دیکھا جاتا ہے۔

اسی بارے میں