یوکرین:صدارتی انتخابات کے لیے پولنگ جاری

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption یوکرین کے وزیرِاعظم آرسنیات سنوک نے ہفتے کو اپنے ٹی وی خطاب میں لوگوں سے ’یوکرین کے دفاع‘ کے لیے ووٹ ڈالنے کی اپیل کی ہے

یوکرین میں مہینوں سے جاری بحران اور سابق صدر وکٹر یانوکووچ کی برطرفی کے بعد نئے صدر کے انتخاب کے لیے آج ووٹ ڈالے جا رہے ہیں۔

ان صدارتی انتخابات میں 18 امیدوار حصہ لے رہے ہیں جسے ملک کو متحد رکھنے کا اہم لمحہ قرار دیا جا رہا ہے۔

تاہم یوکرین کے مشرق میں موجود روس نواز علیحدگی پسندوں نے صدارتی انتخاب کی مخالفت کرتے ہوئے ووٹنگ میں خلل ڈالنے کی دھمکی دی ہے۔

یوکرین میں حالیہ دنوں حکومتی افواج اور باغیوں میں ہونے والی لڑائی میں کم از کم 20 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

ملک مشرقی علاقے دونیتسک اور لوہانسک میں ہونے والے پر تشدد واقعات نے انتخابات کی تیاریوں کو بہت حد تک متاثر کیا ہے۔

واضح رہے کہ فروری میں سابق صدر کی روس نواز پالیسیوں کے خلاف عوامی مظاہروں کے نتیجے میں یانوکووچ کو اپنا عہدہ چھوڑنا پڑا تھا۔

ان کی برطرفی کے بعد اب وہاں صدارتی انتخابات منعقد کیے جا رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مشرقی یوکرین کے علاقوں میں صدارتی انتخابات میں رخنہ ڈالنے کی دھمکی دی گئی ہے

اطلاعات کے مطابق ان انتخابات میں کنفکشنری کے بڑے تاجر پیٹرو پروشینکو کے لیے جیت کی پیش گوئی کی جا رہی ہے۔ انھیں ملک میں ’چاکلیٹ کنگ‘ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔

رائے عامہ میں سابق وزیراعظم یولیا تائموشنکو ’چاکلیٹ کنگ‘ پروشینکو سے پیچھے بتائے جا رہے ہیں۔

ان انتخابات میں واضح برتری حاصل کرنے کے لیے کسی بھی امیدوار کو 50 فی صد ووٹ ملنا چاہیے بہ صورت دیگر فاتح کے انتخاب کے لیے 15 جون کو پھر سے ووٹ ڈالے جائیں گے۔

وزیرِاعظم آرسنیات سنوک نے ہفتے کو اپنے ٹی وی خطاب میں لوگوں سے ’یوکرین کے دفاع‘ کے لیے ووٹ ڈالنے کی اپیل کی ہے۔

انھوں نے کہا ’اس سے مغرب و مشرق اور شمال و جنوب ہر جانب سے یوکرین کے باشندوں کے جذبات کا اظہار ہوگا۔‘

دریں اثنا روس کے صدر ولادی میر پوتن نے جمعے کو پہلی بار کہا کہ وہ نتائج کا احترام کریں گے اور جو بھی صدر منتخب ہوگا اس کے ساتھ مل کر کام کرنے کو تیار ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ g
Image caption یوکرین کے بعض باشندوں کا خیال ہے کہ ان انتخابات کے بعد ملک میں امن بحال ہو جائے گا

پوتن نے یوکرین میں رواں ماہ منعقد ہونے والے صدارتی انتخابات کو ’درست سمت‘ کی جانب قدم قرار دیا ہے۔

کیئف اور اس کے حامی مغربی ممالک روس پر یہ الزام عائد کرتے رہے ہیں کہ روس یوکرین کے مشرقی علاقوں میں علیحدگی پسندی کو ہوا دے رہا ہے تاہم صدر پوتن ان الزامات کی تردید کرتے رہے ہیں۔

یورپ کی تنظیم برائے سلامتی اور تعاون (او ایس سی ای) نے پولنگ سٹیشنوں پر اپنے ایک ہزار سے زیادہ مبصرین تعینات کیے ہیں تاہم سلامتی کے پیشِ نظر او ایس سی ای نے اپنے زیادہ تر مبصرین مشرقی دونیتسک کے علاقے سے ہٹا لیے ہیں۔

بعض روس نواز علیحدگی پسندوں نے لوگوں کو ووٹ ڈالنے سے باز رہنے کی دھمکی دی ہے اور حکام سے ووٹر لسٹ چھینے جانے کی اطلاعات ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption ان انتخابات میں کنفکشنری کے بڑے تاجر پیٹرو پروشینکو کے لیے جیت کی پیش گوئی کی جا رہی ہے

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق خود ساختہ دونیتسک پیپلز ریپبلک کے ایک رہنما ڈینس پشیلین نے کہا ہے کہ ’اگر ضرورت ہوئی تو ہم طاقت کا استعمال کریں گے۔‘

دونیتسک اور لوہانسک کے علیحدگی پسندوں نے 11 مئی کو ہونے والے ریفرینڈم کے بعد اپنے علاقوں کی آزادی کا اعلان کر دیا تھا جسے کیئف اور اس کے مغربی حلیف تسلیم نہیں کرتے۔ ان دونوں علاقوں نے کرائمیا کے ریفرینڈم کی طرز پر یہ ریفرینڈم کرائے تھے۔

مارچ میں روس نے کرائمیا کے علاقے کو اپنے ملک میں شامل کر لیا تھا۔

پولنگ کے دوران سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے 75 ہزار پولیس اور رضاکار تعینات کیے گئے ہیں۔

پولنگ سٹیشن مقامی وقت کے مطابق شام آٹھ بجے تک کھلے رہیں گے اور اس کے نتائج پیر تک آنے کی توقع ظاہر کی جا رہی ہے۔

اسی بارے میں