ایک سال تک انتخابات نہیں ہوں گے: تھائی فوجی حکمران

تصویر کے کاپی رائٹ REUTERS

تھائی لینڈ میں منتخب حکومت کے خلاف بغاوت کرنے والے فوجی حکمران نے کہا ہے کہ ملک میں آئندہ ایک سال سے زائد عرصے تک انتخابات منعقد نہیں کرائے جائیں گے تاکہ سیاسی مفاہمت اور اصلاحات کے لیے وقت دیا جا سکے۔

نئے فوجی حکمران جنرل پرے یوتھ چان اوچا نے ٹی وی پر اپنی خطاب میں تمام لوگوں سے احتجاج ختم کرنے اور تعاون کرنے کا کہا۔ انھوں نے ایک بار پھر خبردار کیا کہ فوج کے خلاف کسی قسم کی مزاحمت کے ساتھ سختی سے نمٹا جائے گا۔

تھائی لینڈ میں 22 مئی کو مارشل لا کے نفاذ کے بعد فوج کے سربراہ نے فوجی بغاوت کا اعلان کرتے ہوئے کہا کیا تھا کہ اب حکومت فوج نے سنبھال لی ہے اور ملک میں مہینوں سے جاری کشیدگی کو ختم کرکے استحکام قائم کیا جائے گا۔

فوجی حکومت نے ملک کی سابق وزیرِ اعظم ینگ لک شناوترا سمیت کئی سیاسی رہنماوں کو حراست میں لیا تھا۔ سابق وزیرِاعظم کو رہا کر دیا گیا ہے لیکن ان پر اب بھی کچھ پابندیاں ہیں۔

بغاوت کے بعد اپنی پہلی عوامی خطاب میں جنرل پرے یوتھ نے کہا کہ ’ فوجی حکومت کے پاس انتخابات کروانے کے لیے ایک سال اور تین مہینے کا وقت ہے۔‘

انھوں نے کہا: ’کیشدگی پر کافی وقت ضائع ہو چکا ہے۔‘

جنرل پرے یوتھ نے کہا کہ تین مہینوں پر محیط پہلے فیز میں نئی کابینہ کی تشکیل پر ’اتفاقِ رائے‘ قائم کیا جائے گا اور نئے آئین کا مسودہ تیار ہوگا، اس کے بعد ایک سال کے عرصے میں اصلاحات کیے جائیں گے اور اس کے بعد ہی انتخابات منعقد کیے جا سکیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’ہمیں وقت دیں کہ آپ کے مسائل حل کر سکیں۔پھر فوجی واپس چلے جائیں گے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption وزیرِ اعظم ینگ لک شناوترا کو ہٹانے کے لیے چھ مہینوں تک جاری احتجاج کے بعد ملک کی فوج نے بغاوت کرکے حکومت کا تختہ الٹا دیا اور خود حکومت سنبھال لی

جنرل پرے یوتھ نے اس سے پہلے خبردار کیا تھا کہ اگر احتجاج جاری رہا تو ان کے پاس طاقت کے استعمال کے علاوہ کوئی چارہ نہیں ہوگا۔

انھوں نے اپنے خطاب میں دوبارہ خبردار کرتے ہوئے کہا کہ احتجاج سے تھائی عوام کو ’خوشحال بنانے‘ کے عمل میں تاخیر ہوگی۔

علاوہ ازیں جمعے کو سینکڑوں فوجیوں نے ممکنہ احتجاج کو روکنے کے لیے بینکاک کے ایک مرکزی چوراہے کو شام کے رش کے اوقات میں بند کر دیا تھا۔

تھائی لینڈ میں وزیرِ اعظم ینگ لک شناوترا کو ہٹانے کے لیے چھ مہینوں تک جاری احتجاج اور سیاسی عدم استحکام کے بعد ملک کی فوج نے بغاوت کرکے حکومت کا تختہ الٹا دیا اور خود حکومت سنبھال لی۔

اسی بارے میں