’لیبیا یورپ کا کھلا دروازہ ہے‘

Image caption بی بی سی کے قوئنٹن سومرویل کو اس جیل تک خصوصی رسائی ملی جس میں 400 کے قریب افریقی تارکینِ وطن انتہائی برے حالات میں قید ہیں۔

لیبیا میں ایک الگ تھلگ کمپاؤنڈ کا آہنی دروازہ چرچرا کر کھلتا ہے جس کے آگے افسردگی اور بدحالی ڈیرے ڈالے ہوئے ہے۔

اس کے اندر 400 کے قریب افریقی تارکینِ وطن غلیظ حالات میں رہتے ہیں جن میں سونے کے بارے میں سوچنا تو دور کی بات بمشکل بیٹھنے کی جگہ ہے۔

یہ مرد بیمار ہیں اور اکثریت فرش پر بیٹھے ہیں جبکہ کچھ ان کمروں کے آہنی شہتیروں میں پناہ لیے ہیں اور ان کا تعلق افریقہ کے کئی ممالک سے ہے جیسا کہ نیجر، اریٹریا، گیمبیا اور مصر ہیں۔

ملک کفاسم کی عمر 37 سال ہے اور ان کا تعلق اریٹریا ہے اور جب ان سے پوچھا کہ کیا انھوں نے لیبیا پہنچنے کے لیے انسانی سمگلروں کو پیسے دیے ہیں تو انھوں نے جواب دیا: ’یقیناً ہم نے انھیں 1600 ڈالر دیے خرطوم سے لیبیا کے لیے مگر بدقسمتی سے ہم کہیں پر گرفتار کر لیے گئے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اس جیل میں افریقہ کے مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے افراد پہنچے ہیں جن میں نیجر، سوڈان اور اریٹریا جیسے ممالک بھی شامل ہیں

یہ لوگ جوؤں سے بھرے ہوئے ہیں اور ملک کا کہنا ہے کہ ان میں سے کئی اس جیل میں تین مہینے سے ہیں۔

ان کے اردگرد نوجوان لڑکے ہیں اور وہ ایک ایک کر کے اپنی عمریں بتاتے ہیں ’16، 16، اور 15۔‘

یہاں پر پاکستان اور بنگلہ دیش سے تعلق رکھنے والے مرد بھی موجود ہیں۔

لیبیا کے ساحلی محافظ، انسانی سمگلر اور حتیٰ کہ تارکین وطن سب اس بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ ’لیبیا یورپ کے لیے ایک کھلا دروازہ ہے۔‘

ایک تاریک جیل میں ایک مرد گولی کے زخم سے گھائل پڑا ہے اور اس کا تعلق گیمبیا سے ہے مگر وہ یہ نہیں بتاتا کہ اسے گولی کس نے ماری۔

لیبیا کے اس ساحلی مقام سے اٹلی 320 کلومیٹر دور ہے اور چالیس کے قریب مرد اور عورتیں کو جن میں سے اکثریتی افریقی ہیں مصراتہ کے قریب پکڑا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption لیبیا میں ریاست کی عملداری نہ ہونے کے برابر ہے جس کی وجہ سے اس کے ساحلوں سے یورپ سفر کرنے والوں کی تعداد میں نمایاں اضافہ دیکھا گیا ہے

انسانی سمگلروں نے سرحد پار جانے سے قبل انھیں اپنے پاسپورٹ اور دوسرے کاغذات ضائع کر دینے کا کہا اور ان کی کشتی کا انجن سفر کے چار گھنٹوں بعد جواب دے گیا اور دو دن تک وہ بھٹکتے رہے جس دوران ان کا پانی اور خوراک ختم ہو گئی۔

یہ محض خوش قسمتی تھی کہ ساحلی محافظوں کو وہ مل گئے اور انھیں بچانے والی مہم کے سربراہ کرنل رضا عیسیٰ کا کہنا ہے کہ یہ اتنا ہی یورپ کا مسئلہ ہے جتنا لیبیا کا۔

’ہم نے یورپی یونین سے درخواست کی کہ ہمیں تلاش کرنے کی مہمات میں مدد دینے کے لیے کشتیاں اور ہیلی کاپٹر فراہم کریں مگر ہمیں کچھ بھی نہیں ملا ہے۔ ہم اس بڑھتی تعداد کو روکنے میں کامیاب نہیں ہو سکیں گے اور اب گیند یورپ کے کورٹ میں ہے اور انھیں ضروری معاونت فراہم کرنی چاہیے۔‘

کرنل رضا کا کہنا ہے کہ ’کھلے سمندر میں انسانی سمگلروں کو فوقیت حاصل ہے اور لیبیا کا مسئلہ ہے کہ اس کے پاس 1930 کلومیٹر پر پھیلے ساحلوں کی حفاظت کے لیے صرف آٹھ کشتیاں ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption کرنل رضا عیسیٰ کا کہنا ہے کہ یہ اتنا ہی یورپ کا مسئلہ ہے جتنا لیبیا کا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ انھیں رات میں دیکھنے کے قابل بنانے والی چشمے، لاشیں محفوظ کرنے والے تھیلے چاہیں ہیں تاکہ ڈوبنے والے تارکینِ وطن کی لاشوں کو نکالا جا سکے۔

مصراتہ کے مردہ خانے میں حاجی رمضان بتاتے ہیں کہ ’رفیریجریٹرز اتنے بھر چکے ہیں کہ انھیں لاشوں کو ایک دوسرے کے ساتھ جوڑ کر رکھنا پڑ رہا ہے اور ایک زمانہ تھا کہ سال بھر میں صرف تین لاشیں آتی تھیں اب آٹھ ایک ہفتے میں آ جاتی ہیں۔‘

وہ بتاتے ہیں کہ ’ان لوگوں کا انسانی سمگلر بہت ناجائز فائدہ اٹھاتے ہیں ہم کچھ لوگوں کو تو بچا لیتے ہیں جب وہ ساحل پر پہنچتے ہیں وہ سوچ رہے ہوتے ہیں کہ وہ اٹلی میں ہیں اور سبھی نہیں مرتے کچھ بچ بھی جاتے ہیں اور پہنچ جاتے ہیں۔‘

تاہم مردہ خانے میں فرش تک پر انسانی لاشیں پڑی ہیں۔

لیبیا ایک ایسا ملک بن چکا ہے جو ایک ریاست کے طور کام نہیں کر رہا ہے اور سرحدوں پر جز وقتی ملازم یا رضا کار گشت کرتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اس جیل میں کئی نوجوان بھی قید ہیں جن کی عمریں سولہ اور پندرہ سال کے لگ بھگ ہیں

انھیں میں سے ایک عبدالبلا ہیں جن کا کہنا ہے کہ ’تارکینِ وطن رات کی تاریکی میں صحرا میں نمودار ہوتے ہیں جب ٹھنڈ ہوتی ہے اور وہ پیدل شہروں تک بجلی کی تاروں کا تعاقب کرتے ہوئے پہنچتے ہیں۔‘

’ہمیں پتا چلتا ہے کہ کچھ رستے میں مر چکے ہوتے ہیں اور سڑک کنارے ان کی قبریں ملتی ہیں جبکہ دوسروں کے لیے ہم ایمبولینس منگواتے ہیں۔‘

مصراتہ کے قریب ایک محافظ بتاتا ہے کہ انھیں چند درجن تارکینِ وطن آئے دن نظر آتے ہیں مگر کئی بغیر پتا چلے گزر جاتے ہیں۔

ان میں سے سب کے مطابق یورپ میں ملازمت اور بہتر زندگی کا وعدہ اس زندگی سے بہت بہتر ہے جو وہ پیچھے چھوڑ کر آتے ہیں۔

اسی بارے میں