نائجیریا: فٹ بال دیکھنے کے مقام پر بم دھماکا، متعدد زخمی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ اسلامی شدت پسند گروپوں بشمول بوکو حرام نے فٹ بال کو غیر اسلامی قرار دیا ہے

نائجیریا میں سکیورٹی حکام کے مطابق یوبی ریاست میں فٹ بال کے عالمی کپ کا میچ ٹی وی پر سکریننگ کے مقام پر بم دھماکے میں متعدد افراد زخمی ہوئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق زخمیوں کو ہسپتال منتقل لایا جا رہا ہے تاہم اس کی تصدیق نہیں ہو سکی کہ اس واقعے میں ہلاکتیں ہوئیں ہیں یا نہیں۔

یوبی ملک کے ان ریاستوں میں شامل ہے جہاں پر شدت پسند تنظیم بوکو حرام کے حملوں کے تناظر میں ایمرجنسی نافذ ہے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے یوبی کے پولیس کمشنر سانوسی روفائی کے حوالے سے بتایا کہ ’مقامی وقت کے مطابق شام 8:15 پر فٹ بال کا میچ ٹی وی دکھانے ایک سینٹر کے باہر بم دھماکا ہوا۔‘

انھوں نے مزید کھا کہ ’ہمارے لوگ جائے وقوعہ پر پہنچ گئے ہیں لیکن اس واقعے کی تفصیلات ابھی آنا باقی ہیں۔‘

خبر رساں ادارے روئٹرز نے ایک ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ ٹرکوں میں لاشیں مقامی ہسپتال پہنچائی گئیں ہیں۔

نائجیریا کے حکام نے شدت پسندوں کے حملوں کے خطرے کے پیشِ نظر ملک کے بعض ریاستوں میں شہریوں کو خبردار کیا تھا کہ وہ عوامی مقامات پر فٹ بال کے عالمی میچوں کو دیکھنے کا اہتمام کرنے سے اجتناب کریں۔

گذشتہ جمعرات کو ملک کے شمال مشرقی ریاست اداماوا میں حکام نے یہ کہہ کر کے کہ انھیں بم دھماکے کرنے کی منصبہ بندی کے بارے میں انٹیلی جنس ملی ہے، تمام عوامی مقامات پر فٹ بال کے عالمی کپ کے میچ دکھانے پر پابندی عائد کرنے کا حکم جاری کیا۔

بورنو، یوبی اور اداماوا ریاستوں میں مئی سنہ 2013 سے ایمرجنسی نافذ ہے۔واضح رہے کہ بوکو حرام نے ملک میں اسلامی مملکت کے قیام کے لیے سنہ 2009 سے روز افزوں خوں ریز جنگ کا سلسلہ جاری رکھا ہے جس میں اطلاعات کے مطابق ابھی تک کم از کم 2000 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ اسلامی شدت پسند گروپوں بشمول بوکو حرام نے فٹ بال کو غیر اسلامی قرار دیا ہے۔

اسی بارے میں