عراقی غذائی اجناس جمع کرنے میں مصروف

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption حکومت کا کہنا ہے کہ بغداد میں غذائی اجناس کی کمی نہیں تاہم مالدار افراد ذخیرہ اندوزی کر رہے ہیں

عراق کے دارالحکومت بغداد کے شہری غلہ پانی کی ذخیرہ اندوزی میں مصروف ہیں کیونکہ اسلام پسند جنگجو شہر کے مزید قریب آ گئے ہیں۔

سُنی شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ عراق و شام ( داعش) اور سکیورٹی فورسز کے درمیان دارالحکومت سے 60 کلومیٹر کے فاصلے پر بعقوبہ کے مقام پر جنگ جاری ہے جہاں شیعہ جنگجوؤں نے سکیورٹی فورسز کے ہمراہ مل کر انھیں پسپا کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ دارالحکومت بغداد کے شہری فکرمند ہیں کیونکہ حملہ آور شمال اور مغرب کی جانب سے اس کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

واضح رہے کہ جنگجوؤں نے گذشتہ کئی ہفتوں کے دوران عراق کے بعض اہم شہروں پر قبضہ کر لیا ہے۔

برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرن بدھ کو اپنے سینیئر سکیورٹی مشیروں سے اس بحران کے متعلق بات کرنے والے ہیں۔ انھوں نے خبردار کیا ہے کہ داعش ’ہمارے ملک کے لیے حقیقی خطرات‘ کی نمائندگی کرتی ہے۔

دوسری جانب امریکی صدر براک اوباما بدھ کو کانگریس کے بڑے رہنماؤں کو عراق کی تازہ ترین صورت حال سے آگاہ کریں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اطلاعات کے مطابق حملہ آور دارالحکومت بغداد سے قریب تر آتے جا رہے ہیں اور وہاں کے باشندوں میں تشویش پائی جاتی ہے

امریکی حکام نے خبررساں ادارے اے پی کو بتایا ہے کہ امریکہ عراق میں سکیورٹی فورسز کی تربیت کے لیے مختصر پیمانے پر سپیشل فورسز کی چھوٹی چھوٹی کارروائیوں کے بارے میں غور کر رہا ہے۔

اس سے قبل عراقی صدر نوری المالکی نے اسلام پسند سنی باغیوں کو روکنے میں ناکامی پر کئی سینیئر اہلکاروں کو برطرف کر دیا ہے۔

ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ چار فوجی کمانڈروں کو قومی فریضے کی انجام دہی میں ناکامی کی پاداش میں برطرف کر دیا گيا ہے۔

برطرف کیے جانے والے فوجی افسروں میں نینوا صوبے کے کمانڈر بھی شامل ہیں۔ نینوا پہلا صوبہ ہے جہاں داعش کے جنگجوؤں نے بڑی کامیابیاں حاصل کی تھیں۔

سرکاری بیان کے مطابق میدانِ جنگ میں اپنی پوزیشن چھوڑنے کے الزام میں ایک اور سینیئر فوجی افسر کو ان کی غیر موجودگی میں کورٹ مارشل کیا جائے گا۔

بیان میں معمول کے خلاف سخت زبان کا استعمال کرتے ہوئے سعودی عرب پر داعش کی پشت پناہی کا الزام لگایا گیا ہے۔ واضح رہے کہ سعودی عرب میں زیادہ تر سنی مسلمان رہتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption عراق میں سکیورٹی فورسز کے ہمراہ شیعہ رضاکار بھی سنّی گروپ داعش کے خلاف برسرپیکار ہیں

نمائندوں کا کہنا ہے کہ عراق کے شیعہ علاقوں میں روزانہ دھماکے ہو رہے ہیں جبکہ بغداد کے لوگوں میں ذہنی طور پر محصور ہونے کی کیفیت پیدا ہو گئی ہے۔

دولت مند افراد نے ضروری اشیائے خوردنی کی ذخیرہ اندوزی شروع کر دی ہے جس کی وجہ سے قیمتوں میں زبردست اضافہ ہو گیا ہے۔ تاہم حکومت کا کہنا ہے کہ بغداد میں اشیائے خوردنی کی کمی نہیں اور یہ کہ باغی بغداد پر قبضہ نہیں کر سکیں گے۔

دوسری جانب منگل کی شام نوری المالکی اور ان کی حکومت کے سینيئر شیعہ رہنماؤں کے ساتھ سنّی رہنماؤں نے بھی ’قومی اتحاد‘ کی اپیل کی ہے۔

انھوں نے عراقیوں سے فرقہ وارانہ مخاصمت سے بچنے کی اپیل کی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption گذشتہ ہفتوں کے دوران عراق کے کئی شہروں پر سُنی شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ عراق و شام (آئی ایس آئی ایس یا داعش) کے جنگجوؤں نے قبضہ کرلیا ہے

بغداد میں بی بی سی کے نامہ نگار جان سمپسن کہنا ہے کہ بہت سے سنّی بطور خاص قدامت پرست، جو آٹھ سال قبل القاعدہ کے خلاف ہو گئے تھے اور جن کی وجہ سے امریکی فوج کو عراق چھوڑنے پر مجبور ہونا پڑا تھا، اس بات سے قطعی خوش نہیں ہیں کہ ان کے شہروں اور قصبوں پر داعش کے لوگوں کا قبضہ ہو۔

تاہم ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ شیعہ رضاکاروں کی جانب سے جوابی کارروائیوں میں عام سنّیوں کو نشانہ بنائے جانے کے نتیجے میں یہ خطرہ ہے کہ کہیں وہ یہ محسوس نہ کرنے لگیں کہ داعش ہی واحد گروپ ہے جو انھیں تحفظ فراہم کر سکتا ہے۔

گذشتہ ہفتے داعش کے جنگجوؤں نے موصل اور تکریت سمیت کئی دوسرے قصبوں پر قبضہ کر لیا تھا، مگر عراقی فوج کا دعویٰ ہے کہ اس نے کئی قصبے جنگجوؤں کے قبضے سے آزاد کروا لیے ہیں۔

اسی بارے میں