بھکاری گرفتار، بارہ لاکھ ریال درآمد

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایک عرب خاتون گرفتار ہوئی ہے جس نے مکہ کی مسجدالحرام سے بلیڈ کے ذریعے 60 ہزار ریال، 12000 ریال کا سونا اور 25 موبائل فون چوری کیے

سعودی عرب میں بھی بھیک مانگنا ایک منافع بخش پیشہ ہے اور خاص طور پر رمضان کے مہینے میں۔ پیشہ ور بھکاری رمضان کے دوران مکہ اور مدینہ پہنچتے ہیں تاکہ زیادہ رقم کما سکیں۔

اسی طرح کے ایک بھکاری کو سعودی عرب پولیس نے بھیک مانگتے ہوئے گرفتار کیا ہے۔ لیکن اس کی خاص بات یہ ہے کہ اس کے بینک اکاؤنٹ میں 12 لاکھ سعودی ریال ہیں اور وہ ایک مہنگی جیپ چلاتا ہے۔

پولیس نے گرفتار شخص کا نام ظاہر نہیں کیا ہے تاہم پولیس کے مطابق یہ قریبی خلیجی ملک کا باشندہ ہے اور سعودی عرب سیاحتی ویزے پر اپنی اہلیہ اور تین بچوں کے ہمراہ آیا ہے۔

پولیس نے مزید بتایا کہ یہ شخص اپنے اہلِ خانہ کے ہمراہ مغربی شہر ينبع میں ایک عالی شان اپارٹمنٹ میں رہ رہا ہے۔

پولیس کے ترجمان کرنل فہد الغنن نے سعودی اخبار عکاظ سے بات کرتے ہوئے کہا: ’اس کے پاس نقد رقم تھی اور کچھ بینک کی رسیدیں ۔۔۔ اس کے پاس 12 لاکھ سعودی ریال تھے اور ایک مہنگی گاڑی بھی۔‘

انھوں نے کہا: ’ہمیں یہ بھی معلوم ہوا کہ وہ ایک عالی شان فرنشڈ اپارٹمنٹ میں رہائش پذیر تھا ۔۔۔ اس شخص کو بھیک مانگتے ہوئے گرفتار کیا گیا۔‘

دوسری جانب پولیس کا کہنا ہے کہ ایک عرب خاتون کو گرفتار کیا ہے جس نے مکہ کی مسجدالحرام سے بلیڈ کے ذریعے 60 ہزار ریال، 12000 ریال کا سونا اور 25 موبائل فون چوری کیے۔

پولیس نے اس عورت کی قومیت ظاہر نہیں کی تاہم کہا کہ اس عورت نے کیمرے، موبائل بیٹریز اور بیگ بھی چوری کیے۔

مسجدالحرام کی سکیورٹی کے انچارج عبدالکریم الزہرانی کا کہنا ہے کہ اس عورت کو اس وقت گرفتار کیا گیا جب انھوں نے دیکھا کہ یہ عورت بلیڈ کے ذریعے جیبیں کاٹ رہی ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ قریبی ہوٹل میں تلاشی میں تقریباً 60 ہزار ریال، سونا، 25 موبائل، پانچ کیمرے اور 11 خواتین کے بیگ برآمد کیے۔

اسی بارے میں