لائبیریا: ایبولا کے 17 مریض ڈھونڈ لیے گئے

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption لائبیریا کے ایک وزیر نے بتایا ہے کہ صحت کے مرکز پر حملہ خوف کے نتیجے میں کیا گیا تھا

افریقی ملک لائبیریا میں ایک وزیر کا کہنا ہے کہ دارالحکومت منروویا میں ان 17 مشتبہ مریضوں کو تلاش کر لیا گیا ہے جو ایک صحت کے مرکز پر حملے کے نتیجے میں لاپتہ ہو گئے تھے۔

لوئس براؤن نے بی بی سی کو بتایا کہ انھیں ڈھونڈ لیا گیا ہے اور ’انھوں نے اپنے آپ کو حکومت کے حوالے کر دیا۔‘

حکومت نے اس سے قبل اس بات سے انکار کیا تھا کہ وہ گمشدہ ہیں۔

اقوامِ متحدہ کے نئے اعداد و شمار کے مطابق اب تک 1229 افراد اس مرض کے نتیجے میں ہلاک ہو چکے ہیں اس سال کے آغاز سے جس کے نتیجے میں سیئرالیون، گنی اور نائجیریا بھی متاثر ہوئے ہیں۔

عالمی ادارۂ صحت کا کہنا ہے کہ 14 سے 16 اگست کے درمیان 84 اموات رپورٹ کی گئیں۔

مغربی افریقہ میں ایبولا کا مرض اب تک کا سب سے تباہ کن مرض ہے جس کے نتیجے میں سب سے زیادہ ہلاکتیں ہوئی ہیں۔

اس مرض کا اب تک کوئی علاج دریافت نہیں کیا جا سکا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پولیس اور سکیورٹی فورسز کو اب تک ملک میں خاصی مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا ہے
تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اس حملے کے بعد سے سکیورٹی فورسز نے صحت کے مختلف مراکز کی سکیورٹی بڑھا دی ہے

اسی بارے میں