اقوامِ متحدہ لیبیا کے ملیشیا رہنماؤں پر پابندی عائد کرے گی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قرارداد میں کہا گیا ہے کہ جنگجو گروہوں کی جائیداد فروخت کی جا سکتی ہے یا ان پر سفری پابندی بھی عائد کی جا سکتی ہے

اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل نے لیبیا میں جاری لڑائی کو فوری طور پر روکنے کی قرارداد منظور کرتے ہوئے لیبیا کے حریف ملیشیا گروہوں کے درمیان تشدد کے واقعات میں ملوث افراد کے خلاف پابندی عائد کرنے کی تجویز دی ہے۔

اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل نے لیبیا کے ملیشیا گروپوں اور فوج کے دھڑوں کے درمیان تشدد کے بڑھتے ہوئے واقعات پر تشویش ظاہر کی ہے۔

سلامتی کونسل نے بدھ کو متفقہ طور ایک قرارداد منظور کی جس میں ان لوگوں اور گروہوں پر پابندی کی دھمکی دی گئی جو لیبیا کی سلامتی کے لیے خطرہ پیدا کر رہے ہیں یا سیاسی تبدیلی کو نقصان پہنچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

قرارداد میں کہا گیا ہے کہ ایسے افراد یا گروہوں کی جائیداد فروخت کی جا سکتی ہے یا ان پر سفری پابندی عائد کی جا سکتی ہے۔

اقوامِ متحدہ میں لیبیا کے سفیر ابراہیم دباشی نے اس قرارداد کو ایک سنگ میل قرار دیتے ہوئے خبردار کیا کہ لیبیا میں صورتِ حال جلد ہی خانہ جنگی میں تبدیل ہو سکتی ہے۔

انھوں نے کہ لیبیا میں ان مسلح گروہوں کو غیر مسلح کرنا بہت اہم ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption لیبیا میں سابق حکمران معمر قذافی کے خلاف سنہ 2011 میں بغاوت کرنے والے مسلح گروہوں کے درمیان لڑائی میں سینکڑوں لوگ ہلاک ہو چکے ہیں

ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت کے پاس ان دہشت گرد گروہوں کا مقابلہ کرنے کی محدود صلاحیت ہے جس کی وجہ سے لیبیا میں خطرہ مسلسل بڑھتا جا رہا ہے۔

طرابلس میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار رانا جواد کے مطابق ابھی یہ واضح نہیں کہ یہ پابندی خاص طور پر کس کے خلاف ہوں گی مگر یہ خیال ظاہر کیا جا رہا ہے کہ ملیشیا کے سینئیر کمانڈر اس کا نشانہ بن سکتے ہیں۔

یہ بھی خیال کیا جا رہا ہے کہ اس تجویز سے ان بیرونی عناصر پر بھی توجہ ہو گی جو لیبیا میں مخالف گروہوں کو مدد پہنچا رہے ہیں۔

اس تجویز کے بعد سوشل میڈیا پر رد عمل میں لوگوں نے کہا ہے کہ کیا حقیقت میں جنگجوؤں پر اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کی اس تجویز کا کوئی اثر پڑے گا بھی یا نہیں۔

خیال رہے کہ طرابلس کا بین الاقوامی ہوائی اڈہ اسلام پسند ملیشیا کے قبضے میں ہے۔

اسلام پسند ملیشیا نے زنتان ملیشیا سے جنگ کے بعد طرابلس کے ہوائی اڈے پر قبضہ کر لیا تھا۔ زنتان ملیشیا کے جنگجو تین برس سے اس ہوائی اڈے پر قابض تھے۔

لیبیا میں سابق حکمران معمر قذافی کے خلاف سنہ 2011 میں بغاوت کرنے والے مسلح گروہوں کے درمیان لڑائی میں سینکڑوں لوگ ہلاک ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں