امریکہ کا دولت اسلامیہ کے خلاف ایران کے ساتھ تعاون سے انکار

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دولت اسلامیہ شمالی اور مغربی عراق اور مشرقی شام کے وسیع علاقوں پر قابض ہے

امریکہ نے کہا ہے کہ وہ عراق میں دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑائی میں ایران کے ساتھ کسی قسم کے فوجی تعاون کا منصوبہ نہیں رکھتا۔

امریکہ کی محکمۂ خارجہ کی ترجمان نے کہا کہ واشنگٹن ایران کو ’اٹیلی جنس‘ یا معلومات فراہم نہیں کرگا۔

اس سے پہلے بی بی سی کو ایران کے سرکاری ذرائع نے بتایا تھا کہ ملک کے اعلیٰ ترین رہنما آیت اللہ علی خامنہ ای نے ایرانی فوجی کمانڈروں کو دولت اسلامی کے خلاف امریکہ، عراق اور کرد فوجیوں کے ساتھ تعاون کرنے کی اجازت دے دی ہے۔

لیکن ایران کے وزارتِ خارجہ نے بھی اس خبر کی تردید کرتے ہوئے اسے غلط قرار دیا۔

ایران روایتی طور پر امریکہ کا عراق میں ملوث ہونے کے خلاف ہے۔ عراق ایران کا اتحادی ہے۔

امریکی محکمـۂ خارجہ کی ترجمان میری ہارف نے کہا کہ ’ہم ایران کے ساتھ اپنی فوجی کارروائی کے حوالے سے رابطے نہیں رکھتے اور انھیں خفیہ معلومات فراہم نہیں کرتے ہیں۔‘

انھوں نے کہا کہ ’بے شک ہم ان کے لیے ہمارے دروازے کھلے ہیں جس طرح کے ماضی میں تھا، خاص کر افغانستان کے حوالے سے لیکن ہم ان سے رابطے میں رہ کر اکٹھے فوجی کارروائی نہیں کریں گے۔‘

ایران دولت اسلامی نامی سخت گیر نظریات کی حامل سنی تنظیم کو ایک خطرہ تصور کرتا ہے۔

ایران خطے میں امریکہ کی مداخلت کا روایتی طور پر مخالف رہا ہے۔

گزشتہ ماہ امریکی فوج کی فضائی کارروائی کی وجہ سے شیعہ مسلح تنظیمیں اور کرد فوج دولت اسلامی کے جنگجوں کی طرف سے عراقی شہر امرلی کا دو ماہ سے جاری محاصرہ ختم کرنے میں کامیاب ہوئی تھیں۔

دولت اسلامیہ شمالی اور مغربی عراق اور مشرقی شام کے وسیع علاقوں پر قابض ہے۔

ماضی میں آیت اللہ علی خامنہ ای عراق میں امریکہ سمیت بیرونی طاقتوں کی مداخلت کی شدت سے مخالف رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ iran
Image caption پاسداران انقلاب ایران کی قدس فورس ملک سے باہر بھی کارروائیاں کرنے کی مجاز ہے۔

ایرانی ذرائع نے بی بی سی کو بتایا تھا کہ آیت اللہ علی خامنہ ای نے ایرانی پاسدران انقلاب کی قدس فورس کے کمانڈر غشام سلیمانی کو دولت اسلامی کے خلاف برسرپیکار قوتوں کے ساتھ تعاون کرنے کا اختیار دے دیا ہے۔ پاسدران انقلاب کی قدس فورس ایران کے باہر کارروائیاں کرنے کی مجاز ہے۔

جنرل سلیمانی گذشتہ کئی ماہ سے عراقی دارالحکومت بغداد کا دفاع مضبوط کرنے کے لیے عراقی شیعہ گروہوں کو تیار کرنے میں مصروف ہیں۔

امرلی کا محاصرہ ختم کرنے کے لیے کی جانے والی کارروائی کے دروان جنرل سلیمانی کی شمالی عراق میں تصاویر انٹرنیٹ پر بھی نظر آئی تھیں جس سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ ایران نے دولت اسلامی کے خلاف لڑنے والی فوجوں اور تنظیموں کے ساتھ پہلے ہی تعاون شروع کر دیا ہے۔

اسی بارے میں