باورچی نے بینک کی غلطی سے ملی رقم جوئے میں ہار دی

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption مہدی کے قرض کو ایک بڑی رقم کے اوور ڈرافٹ میں تبدیل کر دیا گیا ہے

نیوزی لینڈ سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق ایک باورچی نے اپنے بینک اکاؤنٹ میں غلطی سے آنے والے ایک لاکھ ڈالرز سے زیادہ جوئے میں اڑا دیے۔

نیوزی لینڈ کے اخبار ’ہیرلڈ‘ کے مطابق مہدی سہیلی کے بینک نے ان کے اکاؤنٹ میں ایک لاکھ 40 ہزار نیوزی لینڈ ڈالر غلطی سے منتقل کر دیے تھے۔

مہدی نے اس میں سے ایک لاکھ ڈالر سے زیادہ رقم ایک ہفتے میں خرچ کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

مہدی کے وکیل نے کہا ہے کہ ان کے موکل نے ’بدقسمتی سے موقع سے فائدہ اٹھانے کا جرم کیا ہے‘ اور وہ یہ رقم جوئے میں ہار گئے ہیں۔

نیوزی لینڈ کے اخبار ’آکلینڈ ناؤ‘ کا کہنا ہے کہ متاثرہ بینک نے، جس کی شناخت کو خفیہ رکھا گیا ہے، اس رقم کو مہدی کے لیے ’اوور ڈرافٹ‘ میں تبدیل کر دیا ہے جسے وہ آہستہ آہستہ ادا کریں گے۔

مہدی کی وکیل شینن ودرز نے کہا ہے کہ مہدی کے احمقانہ فیصلے ان کے مستقبل کو آنے والے کئی سالوں تک متاثر کریں گے۔

اس مقدمے کی سماعت کے دوران جج ڈیوڈ ولسن نے کہا کہ مہدی کو قید کی سزا دی جا سکتی ہے تاہم انھوں نے سزا سنانے کا فیصلہ نومبر تک ملتوی کر دیا۔

جج کا یہ بھی کہنا تھا کہ مہدی کو یہ رقم واپس کرنے میں کم از کم 13 سال لگیں گے۔

نیوزی لینڈ میں جوئے کی لت ایک بڑا مسئلہ ہے جہاں حکومت کے مطابق تقریباً 60 ہزار افراد یعنی ملک کی بالغ آبادی میں سے ایک اعشاریہ آٹھ فیصد لوگ اس لت کا شکار ہیں۔

ملک کے محکمۂ داخلہ کی رپورٹ کے مطابق ملک میں گیمنگ مشینوں یا ’پوکیز‘ تک آسان رسائی اس مسئلے کی بڑی وجوہات میں سے ایک ہے۔

اسی بارے میں