ترکی کےصدر کے حکم پر سگریٹ نوش کو جرمانہ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ناقدین نے صدر کو لوگوں کی نجی زندگی میں مداخلت کرنے پر الزام لگایا ہے

ترکی کے صدر رجب طیب اردوگان نے ایک شخص کو استنبول کے ایک کیفے میں سگریٹ نوشی کرنے پر پولیس کے ذریعے اس پر جرمانہ کروایا ہے۔

صدر استنبول کے ضلع ایسینلر کی ایک مصروف سڑک کا دورہ کر رہے تھے جب انھوں نے ایک آدمی کو کیفے کی اوپری منزل پر تمباکو نوشی کرتے ہوئے دیکھا۔

انھوں نے اپنی انگلی سے اشارہ کر تے ہوئے آدمی سے کہا کہ: ’یہ کرنے سے تمہیں جرمانہ ہوگا۔‘

انھوں نے پھر پولیس کو اس شخص پر جرمانہ کرنے کا کہا۔ ترکی کی سرکاری عمارتوں سمیت شراب خانوں اور ریستورانوں میں تمباکو نوشی پر پابندی عائد ہے۔

وڈیو فٹیج میں صدر اردوگان تمباکو نوشی کرنے والے شخص کو ’بےشرم‘ کہتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ: ’صدر کے منع کرنے کے باوجود یہ پھر بھی سگریٹ پی رہا ہے۔‘

کیفے مالکان کو بھی تمباکو نوشی پر پابندی کی خلاف ورزی کرنے پر 2,680 ڈالر کا جرمانہ کیا گیا۔

اس واقعے کے بعد سوشل میڈیا پر بھی رد عمل دیکھائی دیا اور ناقدین نے صدر کو لوگوں کی نجی زندگی میں مداخلت کرنے کا الزام لگایا۔

صدر اردوگان سگریٹ نوشی بلکل نہیں پسند کرتے۔ انھوں نے ایک دفعہ اعلان کیا تھا کہ یہ ترکی کےلیے ایک خطرہ لاحق ہے اور ’دہشتگردی کے خطرے سے بھی زیادہ سنگین ہے۔‘

اسی بارے میں