’بے ریاست بدوؤں کے لیے کوموروس کی شہریت‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption کویت میں ان بے ریاست بدون نے کویتی شہریت کے حصول کے لیے مظاہرے بھی کیے ہیں

کویتی حکام کا کہنا ہے کہ ملک میں رہائش پذیر ہزاروں بے ریاست بدوؤں کو براعظم افریقہ کے جزائر کوموروس کی شہریت دی جا سکتی ہے۔

وزارتِ داخلہ کے سینیئر اہلکار نے ایک کویتی اخبار کو بتایا ہے کہ ’بدون‘ کہلائے جانے والے یہ افراد اگر یہ شہریت قبول کرتے ہیں تو انھیں کویت میں قیام کا پروانہ بھی مل سکتا ہے۔

کویت میں ایک لاکھ سے زیادہ بدون آباد ہیں جو خود کو کویتی شہری مانتے ہیں لیکن حکومت ان میں سے بیشتر کا دعویٰ تسلیم نہیں کرتی اور انھیں ملک میں غیر قانونی طور پر مقیم افراد قرار دیتی ہے۔

حالیہ چند برسوں میں ان افراد نے کویتی شہریت کے حصول کے لیے مظاہرے بھی کیے ہیں جن کے نتیجے میں سینکڑوں افراد کو گرفتار بھی کیا گیا۔

کویتی حکومت کا کہنا ہے کہ صرف 34 ہزار بدون ایسے ہیں جو کویتی شہریت کے اہل ہیں۔

اس کے علاوہ باقی بدو ایسے افراد ہیں جن کا تعلق دیگر عرب ممالک سے ہے اور وہ پانچ دہائی قبل کویت میں تیل کی دریافت کے بعد یہاں آئے یا پھر وہ ان افراد کی اگلی نسل ہیں۔

کویت جس ملک کی شہریت کی پیشکش ان بدون کو کر رہا ہے وہ مشرقی افریقہ میں چھوٹے جزائر کا مجموعہ اور عرب لیگ کا رکن ملک کوموروس ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ d
Image caption کویتی حکومت کا کہنا ہے کہ صرف 34 ہزار بدون ایسے ہیں جو کویتی شہریت کے اہل ہیں

کوموروس نوآبادیاتی دور میں فرانس کے زیرِ قبضہ رہا تھا اور یہ شدید سیاسی تشدد کے لیے بدنام رہا ہے۔

کویتی وزارتِ داخلہ کے افسر میجر جنرل ماذن الجراہ نے مقامی اخبار الجریدہ کو بتایا کہ جو بدو کوموروس کی شہریت قبول کر لیں گے انھیں نہ صرف کویت میں رہنے کی اجازت ہوگی بلکہ مفت تعلیم اور صحتِ عامہ کی سہولیات بھی فراہم کی جائیں گی۔

ان کا کہنا تھا کہ شہریت دینے کا عمل آئندہ چند ماہ میں کویت میں کوموروس کا سفارت خانہ کھلنے کے فوراً بعد شروع ہوگا۔

کویتی پارلیمان میں حقوقِ انسانی کی کمیٹی کے رکن فیصل فیصل الدویسن نے اس فیصلے پر تنقید کی ہے اور کہا ہے کہ ’اگر یہ بات سچ ہے کہ یہ افراد دیگر عرب ممالک کے شہری ہیں تو انھیں ان کے آبائی علاقوں میں بھیجا جانا چاہیے نہ کہ انھیں کوموروس کی شہریت دی جائے۔‘

کوموروس کی حکومت کی جانب سے تاحال اس خبر پر کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا ہے۔