دولتِ اسلامیہ کے سربراہ ’البغدادی کا آڈیو پیغام‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ابوبکر البغدادی نے پہلی مرتبہ جولائی میں موصل کی ایک مسجد میں پہلی بار منظر عام پر آئے تھے

شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کی جانب سے جاری کیے جانے والے آڈیو پیغام کےبارے میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ یہ تنظیم کے سربراہ ابوبکر البغدادی نے ریکارڈ کیا ہے۔

تنظیم کی جانب آڈیو ٹیپ ایک ایسے وقت جاری کی گئی جب گذشتہ جمعے کو عراقی شہر موصل کے قریب دولتِ اسلامیہ کے قافلے پر امریکی فضائی حملے کے بعد سے عالمی ذرائع ابلاغ میں افواہ گردش کر رہی ہے کہ تنظیم کے سربراہ ابوبکر البغدادی ہلاک یا زخمی ہو گئے ہیں۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

دولتِ اسلامیہ کیا ہے؟ ویڈیو رپورٹ

ابو بکر البغدادی کے بعد کیا ہوگا؟

دولتِ اسلامیہ کے بدلتے رنگ

دولتِ اسلامیہ نے یہ آڈیو ٹیپ سوشل میڈیا کے ذریعے جاری کی ہے اور اس میں ایک شخص یہ کہتا ہے کہ دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں لڑائی ختم نہیں کریں گے اور یہ آخری جنگجو کے زندہ رہنے تک جاری رہے گی۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ جمعرات کو 17 منٹ کی یہ ریکارڈنگ اصلی ہے اور اسے حال ہی میں ریکارڈ کیا گیا ہے۔

بی بی سی کے تجزیہ کاروں کے مطابق ممکنہ طور پر اس پیغام کا مقصد ابوبکر البغدادی کی ہلاکت کے دعوؤں کی نفی کرنا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption دولتِ اسلامیہ نے چند ماہ پہلے ڈرامائی انداز میں پیش قدمی کرتے ہوئے عراق اور شام کے کئی علاقوں پر قبضہ کر لیا

دولتِ اسلامیہ کے مبینہ صوتی پیغام میں براہ راست فضائی کارروائیوں کا ذکر نہیں کیا گیا لیکن کچھ ایسے واقعات کا تذکرہ کیا جو جمعے کو ہونے والی فضائی کارروائی کے بعد رونما ہوئے۔

ان میں امریکی صدر براک اوباما کی جانب سے موصل میں فضائی کارروائی کے فوری بعد عراق میں حکومت کی مدد کے لیے مزید 15 سو امریکی فوجیوں کو بھیجنے کا اعلان شامل ہے۔

بی بی سی کے عرب امور کے مدیر سبیسشن اوشر کے مطابق طویل آڈیو پیغام قابل ذکر حد تک دھمکی آمیز، اشتعال انگیز اور مخصوص ادائیگی اور زبان پر مبنی ہونے کی وجہ سے آڈیو ٹیپ میں آواز بظاہر دولتِ اسلامیہ کے رہنما کی ہی لگتی ہے۔

آڈیو پیغام میں دولتِ اسلامیہ کے حامیوں کو دنیا بھر میں جہاد شروع کرنے کا کہا گیا ہے۔ اس کے علاوہ سعودی عرب میں بھی حملے کرنے کا کہتے ہوئے سعودی حمکرانوں کو ’سانپ کا سر‘ کہا گیا ہے۔ اس کے علاوہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ شام اور عراق میں امریکی کی سربراہی میں فوجی کارروائیاں ناکام ہو رہی ہیں۔

آڈیو پیغام میں دولتِ اسللامیہ کے خلاف کارروائیوں کے لیے قائم امریکی اتحاد میں شامل خلیجی ممالک کے حمکرانوں کو غدار کہا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption امریکہ کی قیادت میں دولتِ اسلامیہ کے خلاف فضائی کارروائیاں کی جا رہی ہیں

گذشتہ جمعے کو مریکہ نے تصدیق کی تھی کہ اس کے جنگی طیاروں نے عراقی شہر موصل کے قریب دولت اسلامیہ کےایک اجلاس پر بمباری کی ہے لیکن امریکی حکام کے مطابق وہ یہ تصدیق نہیں کر سکتے کہ دولت اسلامیہ کے رہنما ابوبکر البغدادی بھی اس قافلے میں موجود تھے یا نہیں۔

اس حملے کے بعد سے عالمی ذرائع ابلاغ میں افواہ گردش کر رہی ہے کہ تنظیم کے سربراہ ابوبکر البغدادی ہلاک یا زخمی ہو گئے ہیں۔

ابوبکر البغدادی نے پہلی مرتبہ جولائی میں موصل کی ایک مسجد میں پہلی بار منظر عام پر آ کر مسلمانوں کو کہا تھا کہ وہ ان کی بیت کریں۔

دولت اسلامیہ کے جنجگو شام اور عراق کے بڑے علاقوں پر قابض ہیں لیکن گزشتہ دو مہینوں سے امریکہ اور اس کے اتحادی ممالک دولت اسلامیہ کے ٹھکانوں پر بمباری کر رہے ہیں۔

اسی بارے میں