یوکرین: باغی علاقوں سے سرکاری خدمات کی معطلی کا فرمان

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption یوکرین کے صدر کے فرمان سے باغی علاقوں میں سرکاری خدمات معطل ہو جائیں گی

یوکرین کے صدر نے باغیوں کے زیرِ کنٹرول علاقوں سے تمام سرکاری سہولیات اور خدمات واپس لے لینے کا فرمان جاری کیا ہے جن میں ہسپتالوں اور سکولوں کے لیے مالی تعاون بھی شامل ہے۔

صدر پیٹرو پوروشنکو نے ایک فرمان جاری کیا ہے جس میں پارلیمان سے کہا گيا ہے کہ وہ اس قانون کو منسوخ کردیں جو دونیتسک اور لوہانسک علاقوں کو ’خود مختار حکومت‘ کی اجازت دیتا ہے۔

واضح رہے کہ روس نواز علیحدگي پسندوں نے رواں ماہ کے اوائل میں وہاں انتخابات کرائے تھے جسے پوروشینکو نے غیر قانونی قرار دیا تھا۔

مشرقی یوکرین میں جاری تشدد کے نتیجے میں اب تک 4000 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

روس نواز علیحدگي پسند یوکرین حکومت سے رواں سال اپریل سے برسرپیکار ہیں جس کے نتیجے میں ہزاروں لوگ بے گھر ہو گئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption فرمان میں پارلیمان سے کہا گيا ہے کہ وہ اس قانون کو منسوخ کردیں جو دونیتسک اور لوہانسک علاقوں کو ’خود مختار حکومت‘ کی اجازت دیتا ہے

صدر پوروشینکو کے فرمان میں کہا گیا ہے کہ تمام سرکاری کمپنیاں اور ادارے دونیتسک اور لوہانسک میں ایک ہفتے کے اندر اپنا کام بند کردیں۔

اس میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ یوکرین کا سنٹرل بینک ایک ماہ کے اندر وہاں کے بعض علاقوں کے لیے اپنی خدمات بند کردے جس میں کارڈ کا نظام بھی شامل ہے۔

حکم میں کہا گيا ہے کہ ستمبر ہونے والے جنگ بندی کے معاہدے کے تحت ان علاقوں کو جو ’مخصوص حیثیت‘ دی گئی تھی اسے پارلیمان منسوخ کر دے۔

مبصرین کا خیال ہے کہ یہ حکم آسٹریلیا کے شہر برزبین میں جاری جی 20 ممالک کی سربراہی کانفرنس کے پیش نظر آیا ہے جس میں مغربی ممالک نے روسی صدر کو یوکرین کے معاملے پر آڑے ہاتھوں لیا ہے۔

یوکرین اور مغربی ممالک نے روس پر ہتھیاروں اور فوج کے ذریعے علیحدگی پسندوں کی حمایت کا الزام لگایا ہے۔دوسری جانب روس ان الزامات کی تردید کرتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اپریل سے جاری جنگ کے نتیجے میں مشرقی یوکرین کا بعض علاقہ روس نواز علیحدگی پسندوں کے قبضے میں آ گیا ہے

رواں ماہ دو نومبر کو ہونے والے انتخابات کو صدر پوروشینکو اور یورپی یونین دونوں نے ستمبر میں ہونے والے جنگ بندی کے معاہدے کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے غیر قانونی قرار دیا تھا۔

جبکہ باغیوں کا کہنا ہے کہ انتخابات میں الیکزینڈر زخارچینکو دونیتسک کے علاقائی سربراہ منتخب ہوئے ہیں جبکہ لوہانسک میں ایگور پلوٹنسکی فتح یاب ہوئے ہیں۔

اس ماہ کے اوائل میں ہی یوکرین کی حکومت نے یہ اشارہ دیا تھا کہ جو علاقے اس کے کنٹرول میں نہیں ہیں وہ وہاں دی جانے والی سرکاری مراعات کو بند کر دے گی۔

اسی بارے میں