اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

ایک نئے انتفادہ کی آمد آمد ہے

یروشلم میں پولیس کے مطابق دو آتشیں اسلحے اور چھروں سے مسلح دو فلسطینیوں نے ایک یہودی عبادت گاہ میں گھس کر چار اسرائیلیوں کو ہلاک کر دیا ہے۔ حملے میں کئی افراد زخمی بھی ہوئے۔ اسرائیلی پولیس کہتی ہے کہ اس نے دونوں حملہ آوروں کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا۔ اسرائیلی وزیر اعظم بن یامین نیتن یاہو نے حماس اور فلسطینی صدر محمود عباس پر فلسطینیوں کو تشدد پر اکسانے کا الزام لگایا ہے ، جبکہ فلسطینی رہنماؤں کا کہنا ہے کہ مسٹر نیتن یاہو پہلے سے خطرناک صورتحال کو ہوا دے رہے تھے جس میں اسرائیلی اور فلسطینی دونوں ایک دوسرے کو مار رہے ہیں۔ اس تناظر میں بی بی سی اردو سروس نے واشگٹن میں مقیم مشرق وسطیٰ امور کے ماہر ڈاکٹر ممتاز احمد سے بات کی اور سب سے پہلے یہ پوچھا کیا یروشلم میں ایک اسرائیلی عبادت گاہ کے اندر ہلاکت اور تشدد کا یہ واقعہ دہشت گردی کے زمرے میں آتا ہے۔