560 ارب ڈالر کے امریکی دفاعی بجٹ کی منظوری

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بجٹ میں بیرونی جنگی مہمات کے لیے علیحدہ رقم مختص کی گئی ہے

امریکی سینیٹ نے ملک کے دفاعی بجٹ کی منظوری دے دی ہے جس کے تحت عراق اور شام میں شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے خلاف کارروائیوں کو وسعت دی جا سکے گی۔

سینیٹ نے امریکی وزارتِ دفاع پینٹاگون کے 469 ارب ڈالر کے عام بجٹ کی منظوری دینے کے ساتھ ساتھ امریکہ کی بیرونی دنیا میں جاری جنگی مہمات کے لیے 64 ارب ڈالر کے اضافی بجٹ کی بھی منظوری دی ہے۔

اس بجٹ کے تحت شام میں بشار الاسد حکومت کے خلاف برسرپیکار اعتدال پسند گروپوں کی فوجی تربیت اور انھیں اسلحہ فراہم کرنے کی گنجائش بھی رکھی گئی ہے۔

واضح رہے کہ دولت اسلامیہ کا شام اور عراق کے بڑے حصے پر کنٹرول ہے جہاں وہ سخت سنی قانون کا نفاذ کر رہی ہے اور غیر مسلموں کو قتل کر رہی ہے۔

اب تک دولت اسلامیہ کے خلاف آپریشنز کے لیے امریکہ اپنے موجودہ پینٹاگون کے بجٹ میں سے ہی خرچ کر رہا تھا لیکن اب اس کے لیے علیحدہ بجٹ مختص کیا گیا ہے۔

یہ بل 11 کےمقابلے 89 ووٹ سے پاس ہوا اور اس میں 4۔3 ارب امریکی ڈالر براہ راست دولت اسلامیہ کے خلاف امریکی تعیناتی کے لیے مختص کیا گيا ہے جبکہ مزید 6۔1 ارب ڈالر عراق کے کرد باشندوں کو دو سال تک تربیت دینے کے لیے مختص کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption بجٹ میں بیرونی جنگی مہمات کے لیے علیحدہ رقم مختص کی گئی ہے

امریکہ کی کانگرس یعنی ایوان زیریں کے نمائندگان پہلے ہی اس بل کو منظوری دے چکے ہیں اور اب اس بل کو صدر براک اوباما کو بھیجا جائے گا اور ان کے دستخط کے کے ساتھ ہی اس کی توثیق ہو جائے گی۔

نیشنل ڈیفنس اتھورائزیشن ایکٹ (این ڈی اے اے) کئی ماہ سے حکومت اور حزب اختلاف کے درمیان بحث کا موضوع بنا ہوا تھا۔

اس بجٹ میں فوجیوں کی تنخواہوں میں ایک فیصد اضافے کی تجویز بھی منظور کی گئی ہے۔

اس بل میں صدر اوباما کی خلیج گوانتانامو کے حراستی مرکز کو بند کرنے کی تجویز کو رد کر دیا گیا ہے اس کے علاوہ وہاں سے امریکی جیل خانوں میں قیدیوں کی منتقلی پر بھی پابندی لگائی گئی ہے۔

اس بجٹ میں پرانے اے 10 جہازوں کو ناقابل استعمال قرار دیے جانے کے عمل کو ایک سال کے لیے موخر کر دیا گیا ہے۔

اسی بارے میں