غزہ: جنگ بندی کے بعد تازہ اسرائیلی فضائی حملے

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اگست میں جنگ بندی سے پہلے غزہ پر اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی

اسرائیل نے غزہ میں مختلف ٹھکانوں پر تازہ فضائی حملے کیے ہیں جنہیں اگست میں ہونے والی جنگ بندی کے بعد پہلے حملے قرار دیا جا رہا ہے۔

اسرائیل فلسطین تنازع ہے کیا؟

اسرائیلی فوج کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ حملے غزہ سے راکٹوں کے حملے کے جواب میں حماس کے ایک جگہ پر کیے گئے۔

دوسری جانب اے پی کے مطابق غزہ کے علاقے خان یونس کے رہائشیوں نے اطلاع دی ہے کہ انہوں نے دو دھماکوں کی آوازیں سنی ہیں۔

اگست کے مہینے میں اسرائیل نے سات ہفتے کی کارروائی کی جس کے نتیجے میں 2200 افراد جن کی غالب اکثریت فلسطینیوں کی تھی کی ہلاکت ہوئی جس کے بعد جنگ بندی کا اعلان کیا گیا تھا۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان نے کہا کہ طیاروں نے سینیچر کو اُن کے بقول ’حماس کے دہشت گردی کے ڈھانچے‘ کو نشانہ بنایا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اگست میں اسرائیلی حملوں کے بعد غزہ کا ایک علاقہ تباہی کا منظر پیش کر رہا ہے

ترجمان کرنل پیٹر کرنر نے کہا کہ فضائی حملے غزہ کی جانب سے جنوبی اسرائیل میں اشکول کے علاقے پر راکٹوں کے حملے کے جواب میں کیے گئے۔

اُن کےمطابق یہ راکٹ کھلے میدان میں گرے جن سے کوئی نقصان نہیں ہوا۔

دوسری جانب غزہ میں مقامی انتظامیہ کے مطابق فضائی حملوں سے کسی قسم کا جانی نقصان نہیں ہوا۔

اگست میں جنگ بندی سے پہلے جاری رہنے والی لڑائی میں اسرائیل فوج کے 70 کے قریب غزہ پر زمینی اور فضائئ کارروائی میں ہلاک ہوئے جبکہ اسرائیل کے حملوں سے غزہ پر بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی اور سینکڑوں افراد ہلاک ہوئے جن میں بچے اور خواتین بھی شا۔

اسی بارے میں