’تیل کی پیداوار کم نہیں کریں گے، کوئی سیاسی مقاصد نہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سعودی وزیر نے اس تاثر کو رد کیا کہ سعودی عرب سیاسی مقاصد کے لیے تیل کی قیمتیں نیچے لا رہا ہے

تیل سے مالا مال خلیجی ممالک نے ایک بار پھر کہا ہے کہ وہ تیل کی پیداوار میں کمی نہیں کریں گے اور انھوں نے تیل کی گرتی قیمت کا ذمہ دار ان ملکوں کو ٹھہرایا ہے جو تیل تو پیدا کرتے ہیں لیکن اوپیک کے رکن نہیں ہیں۔

سعودی عرب کے وزیر برائے پیٹرولیم علی النعیمی نے کہا ہے کہ ’غلط معلومات پھیلانے کے باعث تیل کی قیمتوں میں 40 فیصد کمی ہوئی ہے۔‘

ابو ظہبی میں بات کرتے ہوئے سعودی وزیر نے اس تاثر کو رد کیا کہ سعودی عرب سیاسی مقاصد کے لیے تیل کی قیمتیں نیچے لا رہا ہے۔

کویت اور متحدہ عرب امارات نے بھی کہا ہے کہ تیل کی پیداوار میں کمی نہیں کی جائے گی۔

علی النعیمی نے کہا: ’وہ ممالک جو اوپیک کے ارکان نہیں ہیں، وہ تیل کی پیداوار کو کم کرنا چاہتے ہیں تو ضرور کریں۔ ہم نہیں کریں گے۔ خاص طور پر سعودی عرب نہیں کرے گا۔‘

کویت کے وزیر برائے پیٹرولیم علی العمیر نے کہا کہ تیل برآمد کرنے والے ملکوں کی تنظیم اوپیک کو پیداوار کم کرنے کی ضرورت نہیں ہے اور اسی لیے کوئی ہنگامی اجلاس طلب نہیں کیا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا: ’میرے خیال میں پیداوار میں کمی کی ضرورت نہیں ہے۔ ہم نے دوسروں کو موقع دیا لیکن وہ بھی ایسا کرنے کو تیار نہیں تھے۔‘

نومبر میں تیل برآمد کرنے والے ملکوں کے اجلاس میں پیداوار کو موجودہ سطح یعنی تین کروڑ بیرل یومیہ پر برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا تھا۔

اس فیصلے کے باعث تیل کی قیمتیں گری تھیں۔

ماضی میں سب سے زیادہ تیل برآمد کرنے والا ملک سعودی عرب قیمتوں کو گرنے سے بچانے کے لیے پیداوار میں اضافہ یا کمی کیا کرتا تھا۔

تاہم اس بار سعودی عرب کی جانب سے ایسا قدم اٹھانے سے انکار سے یہ کہا جا رہا ہے کہ سعودی عرب امریکی شیل کو نقصان پہنچانے اور روس اور ایران کی آمدنی کو کم کرنے کے لیے سیاسی فیصلہ کر رہا ہے۔

علی النعیمی نے اس بات سے انکار کیا کہ سعودی عرب کے اس فیصلے کے پیچھے سیاسی مقاصد ہیں۔

’میں تیل کی گرتی قیمت سے خوش نہیں ہوں۔ تیل کی موجودہ قیمت کے باعث کسی بھی توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری کو نقصان ہو رہا ہے لیکن اس سے عالمی معیشت کو فائدہ ہو رہا ہے۔‘

اوپیک کے سیکریٹری جنرل عبداللہ البدری نے برطانوی خبر رساں ایجنسی روئٹرز کو بتایا کہ اگلے سال کے آخر تک تیل کی قیمتوں میں بہتری آئے گی۔

’ہمیں امید ہے کہ اگلے سال جون تک قیمتوں میں بہتری آ جائے گی۔ ہمیں ابھی تو نہیں معلوم لیکن چھ ماہ بعد پتہ چلے گا کہ مارکیٹ کیا رخ اختیار کرتی ہے۔‘

اسی بارے میں