حلب کو دوائیوں کی فراہمی کی اجازت

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حلب گزشتہ کئی ماہ کی لڑائی میں کھنڈر بن چکا ہے

عالمی ادارہ صحت نے کہا ہے کہ شام میں صدر بشار الاسد کی حکومت نے باغیوں کے زیر قبضہ شہر حلب میں دوائیوں کی ترسیل کی اجازت دے دی ہے۔

عالمی ادارہ صحت کی نمائندہ الزبتھ ہوف کا کہنا ہے حکومت نے دارالحکومت دمشق کے قریب معضميہ اور مشرقی غوطۃ کے علاقوں تک رسائی کا وعدہ کیا ہے اور انھوں نے اس امید کا اظہار بھی کیا ہے کہ ادویات کی ترسیل حلب کے علاقے میں اگلے ہفتے تک پہنچ جائیں گی۔

اقوام متحدہ کے ایلچی نے امداد کی ترسیل کے لیے شام کی حکومت سے حلب میں جنگ بندی کی درخواست کی ہے۔

الزبتھ ہوف کا کہنا ہے امداد کی ترسیل کے لیے شام کے اعلٰی حکام سے بات چیت کی گی۔

ماضی میں کچھ دباؤ کی وجہ سے جراحی کے آلات کی ترسیل میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا لیکن اب صورت حال بہت بہتر ہے۔

عالمی ادارہ صحت کی نمائندہ نے یہ بھی بتایا ک مشرقی غوطۃ کی امداد میں ویکسینیشن بھی شامل ہے جو کے کافی عرصے سے بند تھی۔

اقوام متحدہ کے اندازوں کے مطابق شام میں47 لاکھ لوگ ایسے علاقوں میں ہیں جہاں پہنچنا بہت مشکل ہے اور تقریباً 2 لاکھ 40 ہزار افراد ان علاقوں میں پھنسے ہوئے ہیں جو یا تو سرکاری فورسز کے محاصرے میں ہیں یا پھر حکومت مخالف گروہوں نے ان کے گرد گھیرا کر رکھا ہے۔

شام میں سنہ دو ہزار گیارہ میں شروع ہونے والے اس بحران کے بعد سے اب تک دو لاکھ افراد ہلاک اور نوے لاکھ افراد بے گھر ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں