ایئر ایشیا حادثہ: ہلاک شدگان کی یاد میں دعائیہ تقریب

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سنہ 2014 کی آخری شب منعقد ہونے والی دعائیہ تقریب میں سینکڑوں شہریوں اور ہلاک شدگان کے لواحقین اور رشتہ دار شریک ہوئے

انڈونیشیا کے شہر سورابایا میں سینکڑوں افراد نے مسافر بردار طیارے کے حادثے میں ہلاک ہونے والے افراد کی یاد میں دعائیہ تقریب میں شرکت کی ہے اور شمعیں روشن کی ہیں۔

ملائیشیا کی نجی فضائی کمپنی ایئر ایشیا کی جو پرواز اتوار کو سنگاپور جاتے ہوئے بحیرۂ جاوا میں گر کر تباہ ہوئی تھی اس نے اپنا سفر سورابایا سے ہی شروع کیا تھا۔

ملبہ کیا ملا تمام امیدیں دم توڑ گئیں: تصاویر

اس طیارے کا ملبہ دو دن کی کوشش کے بعد منگل کو تلاش کر لیا گیا تھا تاہم خراب موسم کی وجہ سے ملبے کو سمندر سے نکالنے اور لاشوں کی تلاش میں مشکلات کا سامنا ہے۔

بدھ کو سنہ 2014 کی آخری شب منعقد ہونے والی دعائیہ تقریب میں سینکڑوں شہریوں اور ہلاک شدگان کے لواحقین اور رشتہ دار شریک ہوئے اور مرنے والوں کی یاد میں خاموشی اختیار کی۔

اس پرواز کے زیادہ تر مسافروں کا تعلق انڈونیشیا سے ہی تھا۔

کیو زیڈ 8501 نامی پرواز پر کل 162 افراد سوار تھے جن میں 137 بالغ مسافروں، 17 بچوں اور ایک شیر خوار بچے کے علاوہ عملے کے سات ارکان بھی شامل تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سورابایو لائی گئی دونوں لاشوں کی شناخت نہیں ہو سکی ہے

بدھ کی شام تک سمندر سے صرف سات افراد کی لاشیں ہی نکالی جا سکی ہیں جبکہ منگل کو نکالی گئی دو لاشوں کو بھی بدھ کی صبح سورابایا پہنچایا گیا ہے۔

انڈونیشیا کے صوبے مشرقی جاوا میں اس حادثے کی وجہ سے نئے عیسوی سال کی مناسبت سے منعقد ہونے والی تمام تقاریب منسوخ کر دی گئی ہیں۔

دعائیہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سورابایا کے میئر تری رمشارینی نے کہا کہ ’آئیے مل کر طیارے کے مسافروں کی جدائی کا دکھ سہنے والے خاندانوں کے لیے دعا کریں۔ دعا ہے کہ یہ وہ آخری مصیبت ہو جس کا سامنا سورابایا کو کرنا پڑے۔‘

ملک کے دارالحکومت جکارتہ میں لوگوں نے نئے سال کا آغاز طیارے کے حادثے میں مرنے والوں کے لیے دعا سے کیا۔

اس سے قبل بدھ کی صبح اس حادثے میں ہلاک ہونے والے دو افراد کی لاشیں سورابایا لائی گئیں۔ ان لاشوں کے تابوتوں پر ایک اور دو کے ہندسے تحریر تھے کیونکہ اب تک ان کی شناخت نہیں ہو سکی ہے۔

سمندر سے نکالی جانے والی بقیہ پانچ لاشیں اس وقت ایک بحری جہاز پر موجود ہیں۔ ان سات لاشوں میں سے چار مرد اور تین خواتین کی ہیں اور ایک لاش کی شناخت عملے کے رکن کے طور پر ہوئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بارش اور تیز ہواؤں کی وجہ سے تلاش کے عمل میں مصروف ہیلی کاپٹروں کو اتار لیا گیا

حکام نے تباہ ہونے والی پرواز پر سفر کرنے والے افراد کے لواحقین سے ڈی این اے دینے کو کہا ہے کہ تاکہ لاشوں کی شناخت کی جا سکے۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس نے ملبے اور لاشوں کی تلاش کے عمل سے متعلق انڈونیشیا کی فضائیہ کے افسر نائب ایئر مارشل سوناربو ساندی کے حوالے سے کہا ہے کہ سمندر میں طغیانی کی وجہ سے لاشیں بہہ کر ساحلی علاقوں میں بھی جا سکتی ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ منگل کے مقابلے میں بدھ کو ملبہ بہہ کر 50 کلومیٹر سے زیادہ دوری پر چلا گیا تھا۔

خراب موسم کی ہی وجہ سے بدھ کو تلاش کا عمل بری طرح متاثر ہوا اور تیز ہواؤں اور دو میٹر اونچی لہروں کی وجہ سے نہ صرف ہیلی کاپٹروں کو اتار لیا گیا بلکہ غوطہ خور بھی اپنا کام نہ کر سکے۔

طیارے کے ملبے کی تلاش کا عمل ایک عالمی آپریشن ہے جس میں انڈونیشیا کو ملائیشیا، سنگاپور، آسٹریلیا اور تھائی لینڈ کے علاوہ امریکہ کی مدد بھی حاصل ہے۔

اس کارروائی میں شریک افراد نے امید ظاہر کی ہے کہ وہ طیارے کا بلیک باکس ڈھونڈ نکالیں گے جس سے حادثے کی وجہ معلوم ہو سکے گی۔

تاحال یہ واضح نہیں کہ طیارہ کس وجہ سے تباہ ہوا لیکن پائلٹ نے کنٹرول ٹاور سے اپنی آخری بات چیت میں خراب موسم کی وجہ سے مزید بلندی پر جانے کی اجازت مانگی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption جہاز کی پرواز کا دورانیہ تین گھنٹے تھا لیکن یہ تقریباً ایک گھنٹے کے بعد غائب ہو گیا

اسی بارے میں