’اردنی پائلٹ کے قاتل قرآنی سزاؤں کے حقدار ہیں‘

Image caption شدت پسندوں نے اسلام کی جانب سے جنگ کے زمانے میں بھی لاشیں مسخ نہ کرنے کے حکم کی خلاف ورزی کی ہے: امام احمد الطیب

مصر کی مسجد الازہر کے امام نے کہا ہے کہ اردنی پائلٹ کو زندہ جلانے کے ذمہ دار دولتِ اسلامیہ کے شدت پسند قرآنی سزاؤں کے حقدار ہیں۔

سنّی العقیدہ مسلمانوں کے اہم اسلامی مرکز کے سربراہ اور قاہرہ میں واقع مسجد الازہر کے خطیبِ اعلیٰ احمد الطیب نے کہا ہے کہ ان قاتلوں کو مصلوب کر کے قتل کر دینا چاہیے یا پھر ان کے اعضا کاٹ ڈال دینے چاہییں۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ دولتِ اسلامیہ کے شدت پسندوں درحقیقت خدا اور پیغمبرِ اسلام سے جنگ کر رہے ہیں اور اسی لیے وہ قرآن میں بیان کی گئی سزاؤں کے حقدار ہیں۔

دولتِ اسلامیہ کیا ہے؟ ویڈیو رپورٹ

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق منگل کی شب جاری ہونے والے بیان میں احمد الطیب نے کہا ہے کہ لیفٹیننٹ معاذ الکساسبہ کو زندہ جلا کر شدت پسندوں نے اسلام کی جانب سے جنگ کے زمانے میں بھی لاشیں مسخ نہ کرنے کے حکم کی خلاف ورزی کی ہے۔

خیال رہے کہ منگل کی شام دولتِ اسلامیہ کی جانب سے انٹرنیٹ پر شائع کی جانے والی ایک ویڈیو میں بظاہر دکھایا گیا تھا کہ مغوی پائلٹ کو زندہ جلایا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption اردن نے اپنے پائلٹ کے زندہ ہونے کا ثبوت طلب کیا تھا لیکن ویڈیو میں ان کی ہلاکت کی تصدیق ہوگئی

معاذ الکساسبہ کو دسمبر میں الرقہ کے علاقے سے اس وقت پکڑا گیا تھا جب ان کا جہاز دولتِ اسلامیہ کے زیرِ قبضہ علاقے میں گر کر تباہ ہوگیا تھا۔

معاذ دولتِ اسلامیہ کے خلاف امریکی قیادت میں جاری فضائی کارروائی میں شامل تھے اور وہ اس حادثے میں معمولی زخمی ہوئے تھے۔

ان کی رہائی کے لیے کوششیں ان کی ہلاکت کی ویڈیو کے آنے تک جاری تھیں لیکن اردن کے سرکاری ٹی وی کے مطابق معاذ الکساسبہ تقریباً ایک ماہ پہلے ہلاک کر دیے گئے تھے۔

اردن کی حکومت نے اپنے پائلٹ کی ہلاکت میں ملوث افراد کو سزا دینے اور بدلہ لینے کا عزم ظاہر کیا تھا جس کے بعد بدھ کو ساجدہ الرشاوی نامی شدت پسند خاتون سمیت دو مجرموں کو پھانسی دی گئی ہے جن کی رہائی کا مطالبہ دولت اسلامیہ نے کیا تھا۔

سزائے موت پانے والے دوسرے مجرم عراق میں القاعدہ کے رہنما زیاد کربولی تھے۔

اسی بارے میں