کیا جنازوں پر سیلفی لینا درست ہے؟

تصویر کے کاپی رائٹ Selfies at Serious Places Tumblr
Image caption یہ سب حقیقی مثالیں ایک’ٹمبلر‘ ویب سائٹ ’سنجیدہ جگہوں پر سیلفیز‘ اور نیو یارک کے جیسن گیفر کی ویبسائٹ ’جنازوں پر سیلفیز‘، پر موجوں ہیں

کیا ایک جنازے پر یا ہولوکاسٹ کی یاد گار کے ساتھ یا پھر ایک جلتے ہوئے مکان کے سامنے ’سیلفی‘ لینا حد سے تجاوز کرنے کے مترادف ہے؟

یہ سب حقیقی مثالیں ہیں اور ٹمبلر‘ کی ویب سائٹ پر سنجیدہ جگہوں پر سیلفیز کے عنوان کے نیچے اور نیویارک کے جیسن فیفر کی ’جنازوں پر سیلفیز‘ نامی ویب سائٹ پر موجود ہیں۔

جیسن کی ویب سائٹ پر شائع یہ تصاویر وہ ہیں جنھیں سوشل میڈیا پر عوامی پذیرائی ملی ہے۔ ان میں سے ایک تصویر لاس ویگاس کے شہر میں ایک نوجوان کی زمین پر پڑے ہوئے ایک بے گھر شخص کے ساتھ سیلفی ہے جس کے نیچے لکھا ہوا ہے ’بنا قمیص اور بے گھر سیلفی‘۔

جیسن کہتے ہیں کہ ’یہ جو آپ دیکھ رہے ہیں وہ اس بات کی عکاسی کرتا ہے کہ ایک شخص کیسے بنا سوچے سمجھے کسی بھی چیز کا اظہار کر سکتا ہے۔ یہ ایک سیکنڈ کی سوچ کا اظہار ہے۔‘

خیال رہے کہ سیلفیز لوگوں کی اپنی خود سے کھینچی ہوئیں تصاویر ہوتیں ہیں۔ انٹرنیٹ پر ایسی تصاویر کی بھرمار ہے اور تصاویر کو شیئر کرنے والی ایپ انسٹا گریم پر بھی کروڑوں سیلفیز شیئر اور ٹیگ کی جاتی ہیں۔ موبائل فونز بھی اب سیلفی لینے والے کیمروں کے ساتھ ہی ڈیزائن کیے جاتے ہیں۔

جیسن کے مطابق انھوں نے لوگوں کی تصاویر کے بیک ڈراپ (پس منظر) کے بارے میں تب سوچنا شروع کیا جب وہ اپنی بیوی کے ساتھ یورپ چھٹیاں منانے گئے تھے۔ جب جیسن نے ایمسٹرڈیم میں ’این فرینک‘ کے گھر اور برلن میں ہولوکاسٹ کی یاد گار جیسی جگہوں کا دورہ کیا تو انھوں نے وہاں پر لوگوں کو اپنے کیمرے نکال کر سیلفیز لیتے ہوئے دیکھا۔

جیسن کی ویب سائٹ پر سیلفیز کے شائع ہونے کے بعد جہاں کچھ افراد نے ان سے رابطہ کر کے اپنے اس عمل پر شرمندگی کا اظہار کیا تو کچھ لوگوں نے تصاویر کھینچنے کے جواز پیش کیے۔

ان کا کہناہے کہ وہ کسی کی نیت پر شک نہیں کر رہے اور ان کو اس بات کا احساس ہے کہ اکثر لوگ اپنے دوروں کی یاد گار رکھنا چاہتے ہیں اور اسی لیے سیلفی لیتے ہیں۔

جیسن نے سیلفی لینے کو ایک دلچسپ سماجی رجحان قرار دیاہے۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ ’تاریخ میں پہلی دفعہ لوگوں کے پاس یہ صلاحیت آئی ہے کہ وہ جو دیکھتے ہیں اسے وہ اسی وقت شیئر کر سکتے ہیں۔ ہم کوشش کر رہے ہیں کہ معلوم کریں کہ اس طرح ہر تصویر کو شیئر کرنے کی کیا اہمیت ہو سکتی ہے اور کیا شیئر کیا جانا چاہیے اور کیا شیئر نہیں کیا جانا چاہیے۔‘

اسی بارے میں