ڈیوڈ پیٹریئس کا محبوبہ کو رسائی کا معاملہ انجام تک پہنچ گیا

جنرل پیٹرئیس اور پاؤلا براڈویل تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption جنرل پیٹرئیس پر خفیہ دستاویزات کو بغیر اجازت ہٹانے کا الزام ہے

امریکہ کے خفیہ ادارے سی آئی کے سابق ڈائریکٹر اور فور سٹار جنرل ڈیوڈ پیٹرئیس اور امریکہ کے محکمہ انصاف کے درمیان ایک معاہدہ طے پا گیا ہے۔

معاہدے کے تحت ڈیوڈ پیٹرئیس اس بات کا اعتراف کریں گے کہ انہوں نے اہم کلاسیفائیڈ یا خفیہ دستاویزات کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی تھی اور ان دستاویزات تک غیر ذمہ دارانہ طریقے سے اپنی محبوبہ کو رسائی دی تھی۔

ان کے اس اعتراف کے ساتھ خفیہ دستاویزات تک ان کی محبوبہ کی رسائی کے معاملے کی تحقیقات اپنے اختتام تک پہنچ جائیں گی۔

ڈیوڈ پیٹرئیس نے 2012 میں اس بات کا انکشاف ہونے کے بعد کہ ان کی سوانح عمری لکھنے والے خاتون کے ساتھ ان کے قریبی تعلقات ہیں اپنے عہدے سے استعفی دے دیا تھا۔

امریکہ کے محکمہ انصاف کے مطابق ڈیوڈ پیٹرئیس پر خفیہ دستاویزات کو بغیر اجازت برقرار رکھنے اور ہٹانے کا الزام ہے۔

اس وقت پیٹرئیس نے مستعفی ہوتے وقت کہا تھا کہ ’سینتیس سال سے شادی شدہ ہونے کے باوجود میں نے ایک بہت غلط قدم اٹھایا اور ایک دوسری عورت کے ساتھ روابط رکھے۔ ایک شادی شدہ مرد ہونے اور سی آئی اے جیسی ایجنسی کا سربراہ ہونے کے ناطے یہ قدم ناقابل قبول ہے۔‘

اسی بارے میں