سینا میں شدت پسندوں کے حملے، سات مصری فوجی ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption صحرائے سینا میں ماضی میں بھی فوج پر حملے ہوتے رہے ہیں جن میں بھاری جانی نقصان ہو چکا ہے

مصر کے عسکری حکام کے مطابق جزیرہ نما سینا میں شدت پسندوں کے حملوں میں سات مصری فوجی ہلاک ہوئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق مسلح حملہ آوروں نے جمعرات کو علاقے میں قائم متعدد حفاظتی چوکیوں کو نشانہ بنایا۔

پولیس حکام نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ حملہ آور خودکار ہتھیاروں اور راکٹوں سے مسلح تھے۔

صحرائے سینا میں ماضی میں بھی فوج پر حملے ہوتے رہے ہیں جن میں بھاری جانی نقصان ہو چکا ہے۔

تاحال یہ واضح نہیں کہ اس حملے کے پیچھے کس گروپ کا ہاتھ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سینا کے شمالی اور وسطی علاقے میں تین ماہ کے لیے ہنگامی حالت بھی نافذ ہے

مصر فوج اس علاقے میں دولتِ اسلامیہ سے منسلک ایک شدت پسند گروپ انصار بیت المقدس کے خلاف کارروائیاں کر رہی ہے اور اسی گروپ کو ماضی میں فوج پر حملوں کا ذمہ دار قرار دیا جاتا رہا ہے۔

فوج نے مارچ میں یہاں 70 مشتبہ شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ بھی کیا تھا۔

مصر کی حکومت نے رواں برس جنوری کے آخر میں صحرائے سینا میں اپنے 31 فوجیوں کی ہلاکت کے بعد شمالی اور وسطی علاقے میں تین ماہ کے لیے ہنگامی حالت بھی نافذ کر دی تھی۔

یہ علاقہ سابق صدر حسنی مبارک کو اقتدار سے الگ کیے جانے کے بعد سے لاقانونیت کا شکار ہے۔

جہادی عناصر نے اخوان المسلیمین کے صدر محمد مرسی کو اقتدار سے ہٹانے کے بعد سے اپنی کارروائیوں کو مزید تیز کر دیا تھا۔

اسی بارے میں