دنیا بچوں کی تعلیم کا ہدف حاصل کرنے میں ناکام

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اپریل سنہ 2000 میں 164 ممالک کی جانب سے عالمی سطح پر کیے جانے والے چھ وعدوں میں آئندہ برسوں میں تعلیم کے میدان میں بتدریج بہتری لانے کا عزم کیا گیا تھا

اقوامِ متحدہ کے تعلیم اور ثقافت سے متعلق ادارے یونیسکو کا کہنا ہے کہ عالمی رہنماؤں کی جانب سے دنیا بھر کے بچوں کو سنہ 2015 تک پرائمری تعلیم دلوانے کا وعدہ پورا نہیں کیا جا سکا۔

یونیسکو کا کہنا ہے کہ پانچ کروڑ 80 لاکھ بچوں کو سکول تک رسائی حاصل نہیں جبکہ دس کروڑ بچے اپنی پرائمری تعلیم مکمل نہیں کر سکیں گے۔

پچھلی 15 برسوں میں دنیا بھر کے ایک چوتھائی ممالک بالغوں میں ناخواندگی کو کم کرنے کا ہدف پورا کر سکیں ہیں۔ لیکن یونیسکو کی سربراہ ارینا بوکووا کا کہنا ہے کہ ’ اس کے باوجود کافی ترقی ہوئی ہے‘۔

اپریل سنہ 2000 میں 164 ممالک کی جانب سے عالمی سطح پر کیے جانے والے چھ وعدوں میں آئندہ برسوں میں تعلیم کے میدان میں بتدریج بہتری لانے کا عزم کیا گیا تھا۔

ارینا بوکووا کے مطابق گو کہ ان میں سے کوئی بھی وعدہ ڈیڈ لائن تک مکمل طور پر پورا نہیں ہو سکا لیکن ’سنہ 1990 کی دہائی کے مقابلے میں لاکھوں بچے سکول جانے لگے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ادارے کے مطابق سکول نہ سکنے والی زیادہ تر غریب خاندان کی لڑکیاں ہیں اور بیشتر کا تعلق سو صحارا افریقہ سے ہے

یونیسکو کا کہنا ہے کہ رواں برس کے آخر تک اگر اہداف پورے کرنے ہیں تو اس کے لیے مزید 22 ارب ڈالر کی امداد درکار ہوگی۔

ادارے کے مطابق سکول نہ جا سکنے والی زیادہ تر غریب خاندان کی لڑکیاں ہیں اور بیشتر کا تعلق سب صحارا افریقہ سے ہے۔

عطیات کی کمی کے علاوہ پرائمری سکولوں کے قیام کی راہ میں حائل رکاوٹوں میں لڑائیاں، غربت، تفریق، ناقص انتظامیہ، بدعنوانی اور آبادی میں اضافہ شامل ہیں۔

یونیسکو کے مطابق ’تعلیم سب کے لیے‘ کے چھ اہداف کے حصول میں برطانیہ سب سے کامیاب ملک رہا۔

اب سنہ 2030 تک کے لیے مزید تعلیمی اہداف مقرر کیے جائیں گے جن پر آئندہ ماہ جنوبی کوریا میں ورلڈ ایجوکیشن فورم کے اجلاس میں اتفاق کیا جائے گا۔ جس کے بعد انھیں خزاں میں ہونے والے اقوامِ متحدہ کے اجلاس میں منظوری دی جائے گی۔

نئے اہداف میں توقع ہے کہ سکولوں میں طلبا کی تعداد سے زیادہ معیاری تعلیم کے حصول پر زور دیا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ئے اہداف میں توقع ہے کہ سکولوں میں طلبا کی تعداد سے زیادہ معیاری تعلیم کے حصول پر زور دیا جائے گا

اقوامِ متحدہ کا ادارہ یونیسکو گذشتہ برسوں میں تعلیمی اہداف کی ترقی پر نظر رکھے ہوئے تھا اور اس کے بقول اہداف کے حصول میں ناکامی کے باوجود بعض معاملات میں ایسے شواہد موجود ہیں کہ جو بڑی کامیابی کے زمرے میں آتے ہیں۔

سنہ تک 20 کروڑ 40 لاکھ بچے اور نوجوان ایسے تھے جنھیں سکولوں تک رسائی حاصل نہیں تھی اور یہ تعداد اب کم ہو کر 12 کروڑ دس لاکھ تک آگئی ہے۔ اس کی وجہ سے دنیا بھر مںی پرایمری سکولوں میں بچوں کی تعداد 84 فیصد سے بڑھ کر 93 فیصد ہو گئی ہے۔

تاہم سب صحارا کے ممالک کے مقابلے ایشائی ممالک میں بچوں کے سکول جانے کے تعداد میں زیادہ تیزی سے بہتری آئی ہے۔

نائیجریا، چاڈ اور نائجر میں سب سے کم پیش رفت ہوئی جبکہ ایشیا میں پاکستان نے تعلیم کے فورغ میں نمایاں ترقی نہیں دکھائی۔

تاہم نیپال، افغانستان اور سیرالیون ایسے ممالک ہیں جہاں پچھلے 15 برسوں میں تعلیم کے حصول میں سب سے زیادہ بہتری دیکھنے میں آئی ہے۔

اسی بارے میں