کم سن بچوں کے خلاف ’نفرت انگیز اور اخلاف باختہ‘ جنسی جرائم

تصویر کے کاپی رائٹ NCA
Image caption اس تصویر میں اوپر کے تین افراد پر ایک انتہائی کم سن بچے، ایک کم سن بچے اور ایک کم عمر بچے کے ساتھ ریپ اور جنسی استحصال کرنے کا جرم ثابت ہوا جبکہ نیچے موجود چار افراد نے ایسے جرائم کرنے کو کوشش کی

برطانیہ میں انتہائی کم سن بچوں کا ریپ اور ان کا جنسی استحصال کرنے میں ملوث مختلف افراد کے ایک گروہ کے چند اراکین کو بچوں کے خلاف جنسی استحصال اور جنسی جرائم کا مجرم قرار دے دیا گیا ہے۔

پولیس کے مطابق انھوں نے اس سے ’نفرت انگیز اور اخلاف باختہ‘ جرم اس سے قبل نہیں دیکھا جس میں برطانیہ بھر سے افراد میں ملوث تھے جو بچوں اور انتہائی کم سن بچوں کے ساتھ جنسی استحصال کیا کرتے تھے اور اسے انٹرنیٹ پر لائیو سٹریم کر کے دوسرے اراکین کے ساتھ شیئر کرتے تھے۔

گروہ کے اراکین میں 49 سالہ جون ڈینہم، 34 سالہ میتھیو سٹینفیلڈ نے بچوں کے خلاف جنسی جرائم کی منصوبہ بندی کے جرم سے انکار کیا ہے۔

تاہم ان پر برسٹل کی کراؤن کورٹ میں جرم ثابت ہوا جبکہ گروہ کے پانچ اور ارکین نے اپنے جرائم کا اعتراف کر لیا تھا۔

اس گروہ نے انٹرنیٹ کو بچوں کے جنسی استحصال کے لیے استعمال کیا اور حاملہ خواتین کو اس مقصد کے لیے اپنے چنگل میں پھنسانا شروع کیا ہوا تھا تا کہ استحصال کے لیے نئے بچے حاصل کیے جا سکیں۔

ایک ایسے ہی کیس میں انہوں نے بچے کی پیدائش سے قبل اس کے ماں اور باپ کو پھنسا لیا تھا اور اس جرم کے لیے تیار کیا۔

برطانیہ کی قومی جرائم کے انسداد کی ایجنسی کے حکام نے اس تفتیش کی قیادت کی اور کہا کہ یہ جرائم اب تک اس کے تفتیش کردہ جرائم میں سے سب سے زیادہ ’نفرت انگیز اور اخلاف باختہ‘ تھے۔

اس سے قبل ایک جیوری نے اداکار ڈینہم جن کی عمر 49 سال ہے اور ان کا تعلق ولٹشائر سے ہے اور جنہیں اس سے قبل بینجمن ہارپ کہا جاتا تھا کو 13 سال سے کم عمر کے بچے کو جنسی استحصال کا نشانہ بنانے کا مجرم قرار دیا تھا۔

سٹینفیلڈ جن کا تعلق ہیمپشائر سے ہے کو 13 سال سے کم عمر بچے کا ریپ کرنے کی کوشش کا مجرم پایا گیا تاہم ڈینہم کو اسی جرم سے بری کر دیا گیا تھا۔

پانچ دوسرے افراد نے اس سے قبل بچوں کے ساتھ ریپ اور ریپ کی کوشش کرنے کے جرم کا اعتراف کر لیا تھا ان کے نام یہ ہیں:

  1. بیڈفورڈشایر سے تعلق رکھنے والے 30 سالہ روبن ہولی سن
  2. مانچسٹر سے تعلق رکھنے والے 35 سالہ کرسٹوفر نائٹ
  3. ہل سے تعلق رکھنے والے 51 سالہ ڈیوڈ ہارسلی
  4. ایسٹ سسکس سے تعلق رکھنے والے میتھیو لسک
  5. سومر سیٹ سے تعلق رکھنے والے 33 سالہ ایڈم ٹومز
تصویر کے کاپی رائٹ THINKSTOCK
Image caption بچوں کے تحفظ کےلیے کام کرنے والی تنظیم این ایس پی سی نے اس حوالے سے ایک ہیلپ لائن قائم کرنے کا اعلان کیا

ان افراد کو سزائیں سنانے کیے ابھی تاریخ طے نہیں ہوئی ہے۔

اس تفتیش کے نتیجے میں تین بچوں کی شناخت ہوئی جو اس گھناؤنے جرم کا نشانہ بنے جن میں سے ایک انتہائی کم سن بچہ، ایک کم سن بچہ اور ایک کم عمر بچہ شامل ہیں جنہیں ان مردوں نے استحصال کا نشانہ بنایا جنہوں نے ان کے ولدین کا اعتماد حاصل کر لیا ہوا تھا۔

ان کی ملاقات انٹرنیٹ پر ہوئی اور انہوں نے موقع ملنے پر یہ جرائم کرنے کے لیے گھنٹوں کی مسافت طے کی۔

اس گروہ نے ان بچوں کو نشہ آور اشیا دینے کے بارے میں بھی بات کی اور ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے ان بچوں کے استحصال کو براہِ راست نشر کیا تاکہ دوسرے گروہ کے رکن دیکھ سکیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ان کا شکار بننے والے اور بھی بچے ہیں اور 21 کے قریب بچوں کے تحفظ کے لیے اقدامات کیے گئے ہیں جن کو خطرہ لاحق تھا۔

ان افراد کی جانب سے ثبوت تباہ کیے جانے کی کوششوں کے باوجود پولیس ان کے آن لائن چیٹ یعنی گفتگو کے ریکارڈ حاصل کرنے میں کامیاب ہوئی جن میں اس طرح کے کمنٹس تھے کہ ’میں بہت ہی کم سن بچوں میں دلچسپی رکھتا ہوں‘ یا جتنا ہی اخلاق باختہ ہو اتنا ہی بہتر ہے۔‘

اس تفتیش سے حاصل شدہ مواد جس سے دوسرے اس نوعیت کے مجرموں تک رسائی ممکن ہے کو دنیا کے پانچ براعظموں کی پولیس کو بھجوایا گیا ہے۔

اس سے قبل عدالتی کارروائی کے دوران ڈینہم نے بتایا کہ ’ایک کم عمر بچی کے ایک مرد کے ساتھ جنسی تعلق کو دیکھ کر اس حوالے سے بے حس ہو گئے تھے اور ان کے لیے اس کے بعد عمر کم سے کم ہوتی چلی گئی۔‘

انہوں نے کہا کہ وہ ’شرمندہ ہیں کم سن بچوں سے جنسی لذت حاصل کرنے اور ان کی فحش فلمیں دیکھ کر جنسی لطف اٹھانے کی حرکات پر‘ اور انہیں اندازہ ہے کہ ’اس سب کا شکار ہونے والے حقیقت میں موجود ہیں۔‘