شمالی کوریا کا ’آبدوز کے ذریعے میزائل لانچ‘ کرنے کا دعویٰ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption آزاد ذرائع نے شمالی کوریا کے حالیہ تجربے کی منظوری نہیں دی

شمالی کوریا نے آبدوز کے ذریعے میزائل لانچ کرنے کا کامیاب تجربہ کرنے کا دعویٰ کیا ہے اور اگر یہ معلومات درست ثابت ہوتی ہیں تو اسے سے شمالی کوریا کی عسکری صلایت میں اضافہ ہو گا۔

ابھی تک آزاد ذرائع نے شمالی کوریا کے اس تجربے کی تصدیق نہیں کی ہے۔

اطلاعات کے مطابق آبدوز کے ذریعے میزائل فائر کرنے کا تجربہ ملک کے مشرقی ساحلی شہر سنپو میں کیا گیا۔

رواں سال کے آغاز پر اسی علاقے سے سیٹلائٹ کے ذریعے چند تصاویر جاری کی گئی تھیں جن میں مسلح آبدوز کو دکھایا گیا تھا۔

رپورٹس کے مطابق شمالی کوریا کے سپریم کمانڈر کم جانگ ان نے کہا ہے کہ اب ان کے ملک کے پاس دنیا میں اعلیٰ صلاحیت کا حامل ہتھیار ہے۔ جس کے ذریعے وہ ان کے ملک کی جانب بڑھنے والی افواج کو سمندر سے بھی نشانہ بنا سکتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Science Photo Library
Image caption یہ بھی کہا جاتا ہے کہ شمالی کوریا چھوٹے جوہری ہتھیار بنا کر اپنے میزائلز میں فٹ کرنے کی کوشش کر رہا ہے

خیال رہے کہ اس قسم کا تجربہ کرنا اقوامِ متحدہ کی ان پابندیوں کی خلاف ورزی ہے جن کے تحت شمالی کوریا بیلسٹک میزائل ٹیکنالوجی کا تجربہ نہیں کر سکتا۔

اب تک شمالی کوریا کے پاس موجود میزائل زمین سے زمین پر مار کرنے کی صلاحیت کے حامل تھے جن سے وہ ہمسایہ ممالک کو نشانہ بنا سکتا تھا۔

اس خیال کا اظہار بھی کیا جاتا رہا ہے کہ شمالی کوریا چھوٹے جوہری ہتھیار بنا کر انھیں میزائلوں میں نصب کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

شمالی کوریا کے سرکاری میڈیا پر کم جونگ ان کی ایسی تصاویر دکھائی جا رہی ہیں جن میں وہ پانی میں سے نکلتے ہوئے میزائل کو دیکھ رہے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگرچہ شمالی کوریا کے پاس پہلے ہی جوہری ہتھیاروں کی صلاحیت موجود ہے تاہم آبدوز سے مار کرنے والے میزائل کا پتہ لگانا مشکل ہوتا ہے۔

خیال رہے کہ ابھی تک آزاد ذرائع نے شمالی کوریا کے اس تجربے کی تصدیق نہیں کی ہے۔

مقامی میڈیا پر میزائل تو دکھایا جا رہا ہے تاہم تاریخ اور جگہ کے بارے میں نہیں بتایا گیا۔

اسی بارے میں