کمپنی کے خرچ پر فرانس گُھومو

  • 10 مئ 2015
تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption چینی ملازمین ان تعطیلات کے دوران لوور میوزیم کا خصوصی دورہ کریں گے

چین کی ایک کمپنی نے اپنے خرچ پر چھ ہزار چار سو ملازمین کو چار دن کی تعطیلات پر فرانس بھیجا ہے۔

فرانس آنے والا اب تک کا یہ سب سے بڑا سیاحتی گروہ سنیچر کو ملک کے سیاحتی مقام نیس پہنچا۔

کمپنی کے صدر لی جن یوآن نے اس سیاحتی دورے کے لیے پیرس میں 140 ہوٹل، جبکہ کیننز اور موناکو میں 4700 سے زائد کمرے بک کروائے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اس گروپ نے مخصوص انداز میں کھڑے ہوکر سب سے لمبا جملہ لکھا جوایک نیا ریکارڈ ہے

چینی ملازمین ان تعطیلات کے دوران لمشہور عجائب گھر ’لوو میوزیم‘ کا خصوصی دورہ کریں گے جہاں ان کے علاوہ اس وقت اور کوئی نہیں ہوگا۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ فرانس کا مشہور ثقافتی شو مولان روژ بھی دیکھنے جائیں گے۔

جمعے کو گینیز ورلڈ ریکارڈز کا معائنہ کرنے والے اہلکاروں نے ساحلِ سمندر پر جمع ہونے والے افراد کا معائنہ کیا اور انسانوں کے ایک مخصوص انداز میں کھڑے ہو کر عالمی ریکارڈ ٹور نے کی کوشش میں ایک جملے کو تشکیل دیتے ہوئے دیکھا۔

مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ امکان ہے کہ کمپنی اس دورے پر ایک کروڑ 46 لاکھ ڈالرز خرچ کرے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption فرانس آنے والا اب تک کا یہ سب سے بڑا سیاحتی گروہ سنیچر کو ملک کے سیاحتی مقام نیس پہنچا۔

فرانس میں سیاحت کے لیے کام کرنے والی ایجنسی کے سربراہ کرسٹین مینٹل کا کہنا ہے کہ ’ ہم نے فوری طور پر ٹورزم پروفیشنلز، ہوٹلوں، ریسٹورانٹ، دوکانوں اور ڈیزائنر برینڈز سے رابطے کیے۔ اب تک سب کچھ بالکل ٹھیک رہا ہے اور بہت مثبت آراء موصول ہوئی ہیں۔‘

سیاحوں کو ان کی تعطیلات کے دوران سیر کے لیے 146 بسیں فراہم کی گئی ہیں۔

اسی بارے میں