جاپانی وزیرِ اعظم کی چھت پر ڈرون

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption جاپانی حکام ایک چھوٹے ڈرون کے گرد جمع ہو رہے ہیں جو جاپانی وزیرِ اعظم شنزو آبے کے گھر کی چھت پر اتر گیا تھا

جاپان کے وزیرِ اعظم کے گھر کی چھت پر ڈرون ملنے کے بعد حکام نے ٹوکیو کے پارکوں میں ڈرون کے استعمال پر پابندی عائد کر دی ہے۔

جاپان میں میڈیا کے مختلف حصوں نے خبر دی ہے کہ اس واقعے کے بعد فیصلہ کیا گیا ہے کہ دارالحکومت ٹوکیو کے 81 پارکوں میں اب ڈرون لے جانے یا وہاں سے اڑانے کی اجازت نہیں ہو گی۔

میڈیا میں آنے والی اطلاعات کے مطابق اگر کسی نے اس حکم کی خلاف ورزی کی تو اسے 265 برطانوی پاؤنڈ کے مساوی جرمانے کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

یہ فیصلہ اس واقعے کے بعد کیا گیا جب ایک تابکاری مواد سے لیس ڈرون جاپانی وزیرِ اعظم کے گھر کی چھت پر اتر گیا۔

ٹوکیو پولیس کا کہنا ہے کہ وزیرِ اعظم کے گھر کی چھت پر ڈرون کے اترنے کے بعد ایک شحض نے اپریل کے آخر میں خود کو پولیس کے سامنے پیش کر دیا جسے حراست میں لے لیا گیا۔

یاسوو یاماموٹو جن کی عمر 40 برس ہے، اور وہ دراصل جاپانی حکومت کی جوہری پالیسی پر احتجاج کر رہے تھے۔

خبروں کی ویب سائٹ ’جاپان نیوز‘ کے مطابق ٹوکیو کی میٹروپولیٹن پولیس کا کہنا ہے کہ ڈرون بچوں کے لیے خطرہ بن رہے ہیں۔ خبروں کی اس ویب سائٹ نے حکام کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ وہ لوگوں پر جرمانہ نہیں کرنا چاہتے لیکن انھوں نے عوام سے کہا ہے کہ وہ ڈرون سے متعلق حکم کی تعمیل کریں۔

اسی بارے میں