رمادی پر دولت اسلامیہ کا قبضہ چھڑانے کے لیے ’شیعہ ملیشیا طلب‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شیعہ ملیشیا نے حکومت کے کہنے پر رمادی کی طرف پیش رفت شروع کر دی تھی

اطلاعات کے مطابق ملک کے سب سے بڑے صوبے الانبار کے دارالحکومت رمادی کو دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے چھڑانے کے لیے عراقی حکومت ایران کی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیا کو وہاں بھیجے گی۔

اس سے قبل اطلاعات تھیں کہ شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ نے سرکاری فورسز کو پسپا کر کے شہر پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

ایک مقامی سرکاری اہلکار کے مطابق صوبہ انبار کے دارالحکومت رمادی سے بڑی تعداد میں افراد نقل مکانی کر رہے ہیں۔ ایک اور سرکاری اہلکار کے مطابق جمعرات کو شروع ہونے والے دولتِ اسلامیہ کے تازہ حملے میں عام شہریوں سمیت اب تک 500 کے قریب لوگ ہلاک ہو چکے ہیں اور شہر میں پھنسے ہوئے لوگوں کا دولتِ اسلامیہ کے ہاتھوں قتلِ عام کا خدشہ ہے۔

دولتِ اسلامیہ کیا ہے؟ ویڈیو رپورٹ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption فوجی حکام نے بھی سرکاری افواج کی پسپائی کی تصدیق کی ہے

تاہم امریکہ نے رمادی پر دولتِ اسلامیہ کے قبضے کی تصدیق کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا ہے کہ صورت حال ابھی’غیر واضح اور متنازع‘ ہے اور فی الحال حتمی بیان دینا ’قبل از وقت ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption رمادی سے عراقی فوج کو نکلتے دیکھا جا سکتا ہے

ایران کی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیا نے دو ماہ قبل تکریت شہر کو دولت اسلامیہ کے قبضے سے چھڑانے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

تاہم تکریت میں لوٹ مار اور پرتشدد واقعات کے بعد انھیں شہر سے باہر بلا لیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ رمادی پر دولتِ اسلامیہ کے مکمل قبضے سے کچھ دیر پہلے ہی ملک کے وزیراعظم نے افواج کو حکم دیا تھا کہ وہ اپنے مورچے نہ چھوڑیں اور صوبہ الانبار میں دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑائی جاری رکھیں اور اس کے ساتھ انھوں نے شہر کے تحفظ کے لیے شیعہ ملیشیا کو تعینات کرنے کا اعلان کیا تھا۔

اتوار کی رات کئی دن کی شدید لڑائی کے بعد عراقی فوج اور پولیس افراتفری میں پسپا ہو گئی۔

دولتِ اسلامیہ نے شہر کے مرکز پر حملے کے بعد سرکاری فورسز کے کمانڈنگ ٹھکانوں پر قبضہ کر لیا ہے۔

دولتِ اسلامیہ کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ شہر پر اس کے جنگجوؤں نے قبضہ کر لیا ہے۔ اس کے علاوہ فوج کی آٹھویں بریگیڈ کے اڈے پر بھی قبضہ کر لیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption عراق کی شیعہ ملیشیا کو فوجی کی مدد کے لیے روانہ کیا جا رہا ہے

دولتِ اسلامیہ کے مطابق عراقی سکیورٹی فورسز کی جانب سے اڈے میں پیچھے چھوڑے جانے والے کئی ٹینکوں اور میزائل لانچروں پر قبضہ کر لیا ہے۔

صوبہ الانبار کے گورنر ہاؤس میں ایک اعلیٰ اہلکار نے نام نہ ظاہر کرنے پر بی بی سی کو تصدیق کی کہ رمادی اس وقت دولتِ اسلامیہ کے مکمل کنٹرول میں ہے اور شہر سے تمام سرکاری فوجی نکل گئے ہیں۔

ایک عراقی فوجی اہلکار کے مطابق فوجی رمادی سے مشرق کی جانب واقع شہر الخالدیہ کی طرف پسپا ہوئے ہیں۔

صوبے کے گورنر کے مشیر نے فرانسیسی ایجنسی اے ایف پی کو بتایا ہے شہر میں سرکاری عمارات خالی کر دی گئی ہیں۔

کئی فوجی حکام نے بھی سرکاری افواج کی پسپائی کی تصدیق کی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption شہر سے بڑی تعداد میں لوگ نقل مکانی کر چکے ہیں

واضح رہے کہ عراق کی سکیورٹی فورسز اور ان کی اتحادی شیعہ ملیشیا نے سابق صدر صدام حسین کے آبائی شہر تکریت کو دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے آزاد کرایا تھا جس پر دولتِ اسلامیہ نے گذشتہ سال جون میں قبضہ کر لیا تھا۔

اس کامیابی کے بعد عراق کے وزیراعظم حیدر العبادی نے صوبہ الانبار کو شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے آزاد کرانے کے لیے کارروائی کا اعلان کیا تھا۔ ان کا کہنا تھا ’ہماری اگلی جنگ انبار کی سرزمین پر ہو گی اور اسے مکمل طور پر آزاد کرایا جائے گا۔‘

صوبہ انبار میں سنّی آبادی اکثریت میں ہے اور اس کی سرحدیں ایک طرف شام اور دوسری طرف عراقی دارالحکومت بغداد سے ملتی ہیں۔

اسی بارے میں