’عراقی فوج میں دولتِ اسلامیہ سے جنگ میں عزم کی کمی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عراقی حکام نے امریکی وزیرِ دفاع کے بیان کو بے بنیاد قرار دیا ہے

امریکہ کے وزیرِدفاع ایشٹن کارٹر نے کہا ہے کہ صوبہ انبار کے دارالحکومت رمادی میں عراق افواج کی شکست ظاہر کرتی ہے کہ ان میں شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑنے کے عزم کی کمی ہے۔

امریکی نشریاتی ادارے سی این این سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عراقی فوجی تعداد میں دولتِ اسلامیہ سے کافی زیادہ تھے پر پھر بھی انھوں نے پسپائی اختیار کی۔

انھوں نے کہا کہ’ہم انھیں تربیت دے سکتے ہیں، مسلح کر سکتے ہیں لیکن ظاہر ہے کہ لڑنے کے لیے عزم تو نہیں دے سکتے ہیں۔‘

امریکی وزیر دفاع ایشٹن کارٹر نے عراقی فوج کی مدد کے لیے فضائی حملوں کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ آخر کار دولتِ اسلامیہ کی شکست کا انحصار عراقی عوام پر ہی ہو گا۔

’ہم دولتِ اسلامیہ کو شکست دینے میں حصہ لے سکتے ہیں لیکن عراق کو ایسی مناسب اور مہذب جگہ نہیں بنا سکتے جہاں عراقی عوام رہ سکیں، ہم فتح کو زیادہ عرصہ برقرار بھی نہیں رکھ سکتے اور یہ عراق کو خود کرنا پڑے گا، خاص کر جب مغربی علاقے میں سنّی قبائل آباد ہوں‘۔

دوسری جانب عراقی حکومت کی سکیورٹی اور دفاعی کمیٹی کے سربراہ نے کہا ہے کہ ایشٹن کارٹر کا بیان غیر حقیقی اور بے بنیادہے

واضع رہے کہ گذشتہ اتوار کو دولت اسلامیہ نے رمادی پر قبضہ کر لیا تھا اور اس کے بعد عراقی وزیراعظم نے شہر کو واپس لینے کے لیے شیعہ ملیشیا کو مدد کے لیے بلایا تھا۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

سنیچر کو شیعہ ملیشیا نے رمادی سے سات کلومیٹر کے فاصلے پر واقع حصیبہ شہر کو دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے آزاد کرا لیا تھا اور ملیشیا کے اہلکار مادی شہر سے دولتِ اسلامیہ کا قبضہ ختم کرنے کی تیاری کر رہے ہیں۔

دوسری جانب عراقی حکام نے اس اہم پل کو بند کر دیا ہے جس کے ذریعے لوگ رمادي شہر سے نقل مکانی کرکے دارالحکومت بغداد میں داخل ہو رہے ہیں۔

رمادي پر دولت اسلامیہ کے شدت پسندوں کا قبضہ ہونے کے بعد تقریباً 40 ہزار سے زیادہ لوگ شہر چھوڑ چکے ہیں اور اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ وہ ان لوگوں تک پہنچنے کی کوشش کر رہا ہے۔

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے شعبے کے نائب کوارڈینیٹر نے رمادی چھوڑنے والے ان افراد کی پریشانیوں اور مشکلات کا ذکر کیا ہے۔

نائب کوارڈینیٹر ڈومینک بارش نے بی بی سی کو بتایا کہ ’بے گھر ہونے والے افراد میں خواتین، بوڑھے اور بیمار بھی شامل ہیں جنھیں بغداد میں داخل ہونے والے پل کے قریب روک دیا گیا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption رمادی چھوڑنے والے افراد کی پریشانیوں اور مشکلات کا سامنا ہے

انھوں بتایا ہے کہ پل کے قریب پانی کی کمی کے سبب کئی بچوں کی ہلاکت بھی خبریں ہیں۔

ڈومینک ڈومینک نے بتایا کہ جو لوگ ابھی بھی رمادی میں ہیں ان کے بارے بہت کم معلومات ہیں۔

انھوں نے کہا: ’ہمیں انتقامی کاروائیوں، گولی مارنے اور شہر میں جو شہری بچ گئے ہیں ان کے خلاف ظلم و ستم کی خبریں مل رہی ہیں۔‘

جمعے کو عراق کے نائب وزیر اعظم صالح المطلق نے متنبہ کیا کہ دولت اسلامیہ سے ’جنگ اب مقامی بات نہیں رہ گئي ہے‘ اور بین الاقوامی برادری سے اس ضمن میں عمل کرنے کی اپیل کی ہے۔

شام پر انسانی حقوق کی آبزرویٹری نے کہا ہے کہ اپنے حالیہ حملے میں دولت اسلامیہ نے عراق سے ملحق شام کی حکومت کے زیرانتظام آخری شہر پر بھی قبضہ کر لیا ہے۔

امریکہ نے تسلیم کیا ہے کہ شام میں پیلمائرا اور عراق میں رمادی پر دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے شدت پسند تنظیم کے خلاف جاری مہم کو دھچکا پہنچا ہے تاہم صدر اوباما نے کہا ہے کہ اس کا مطلب یہ نہیں کہ امریکہ یہ جنگ ہار رہا ہے۔

رمادی کے شہریوں کا کہنا ہے کہ دولتِ اسلامیہ کے شدت پسندوں شہر پر اپنا قبضہ مضبوط کر رہے ہیں اور انھوں نے نہ صرف دفاعی مورچے قائم کیے ہیں بلکہ شہر میں بارودی سرنگیں بھی بچھا دی ہیں۔

اسی بارے میں