تاجکستان کے اعلیٰ فوجی کمانڈر دولت اسلامیہ میں شامل

Image caption گلمرود خلیمووف وسطی ایشیا کے اعلیٰ ترین سرکاری اہلکار ہیں جنھوں نے شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ میں شمولیت اختیار کی ہے

تاجکستان کی سپیشل فورسز کے سربراہ گلمرود خلیمووف نے ایک ویڈیو میں اعلان کیا ہے کہ انھوں نے تاجکستان حکومت کی اسلام مخالف پالیسیوں کی وجہ سے دولت اسلامیہ میں شرکت اختیار کر لی ہے۔

گلمرود خلیمووف رواں ماہ کے ابتدائی ہفتے سے لاپتہ تھے۔ شام میں بنائی گئی ایک ویڈیو میں گلمرود خلیمووف سیاہ لباس میں ملبوس ایک گن اٹھائے ہوئے نظر آتے ہیں اور اعلان کرتے ہیں کہ وہ ’جلاد‘ بن کر واپس آئیں گے۔

گلمرود خلیمووف اپنی ویڈیو میں یہ بھی کہتے ہوئے سنے جاتے ہیں کہ انھوں نے دولت اسلامیہ میں شامل ہونے کا فیصلہ حکومت کی مذہب مخالف پالیسوں کے خلاف احتجاج کے طور پر کیا ہے۔

خیال کیا جاتا ہے کہ وسطیٰ ایشیائی ممالک سے سینکڑوں باشندے دولت اسلامیہ میں شریک ہیں لیکن گلمرود خلیمووف اعلیٰ ترین سرکاری اہلکار ہیں جنھوں نے شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ میں شمولیت اختیار کی ہے۔

تاجکستان میں حکام نے یو ٹیوب پر موجود اس ویڈیو کو بلاک کر دیا ہے۔

الماتی میں بی بی سی کے عبدالرسولوف کے مطابق حکومت نے اپنے اعلیٰ اہلکار کی دولت اسلامیہ میں شمولیت پر کوئی تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے۔ البتہ حکام نے یو ٹیوب پر موجود اس ویڈیو کو بلاک کر دیا ہے۔

نامہ نگار کا کہنا ہے کہ شدت پسندوں کے خلاف کارروائیوں کی شہرت رکھنے والےگلمرود خلیمووف کا شمار ملک کےانتہائی تربیت یافتہ اہلکاروں میں ہوتا ہے۔

Image caption موجودہ صورتِ حال میں خلیمووف کی دولت اسلامیہ میں شمولیت دوشنبے میں بہت محسوس کی جائے گی

گلمرود خلیمووف اپنی ویڈیو میں تاجک پولیس کی زیادتیاں اور روس میں ہزاروں تاجک مزدوروں کے ساتھ پیش آنے والے ناروا سلوک کا ذکر کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ وہ جلاد بن کر واپس آئیں گے۔

سوویت یونین سے آزادی کے بعد تاجکستان میں شروع ہونے والی خانہ جنگی شروع ہو گئی تھی تاہم اب وہ ایک مستحکم ملک ہے۔

خلیمووف جس سرعت کے ساتھ تاجکستان چھوڑ کر شام میں دولت اسلامیہ میں شریک ہوئے ہیں اس نے تاجکستان میں لوگوں کو حیران کر دیا ہے۔ وہ پچھلے ماہ تک تاجکستان کی حکومت کا حصہ تھے۔

خلیمووف کی ایسے وقت میں دولت اسلامیہ میں شمولیت دوشنبے میں بہت محسوس کی جائے گی جب افغانستان کی سکیورٹی فورسز وسطی ایشیا کے شدت پسندوں کو وہاں سے باہر نکالنے کی کوشش کر رہی ہیں۔

ابھی تک واضح نہیں ہے کہ وسطیٰ ایشیا سے تعلق رکھنے والے کتنے دہشت گرد دولت اسلامیہ میں شمولیت اختیار کر چکے ہیں لیکن ایک محتاط اندازے کے مطابق ان کی تعداد 200 سے 500 تک ہے۔ وسطی ایشیا سے تعلق رکھنے والے جنگجوؤں نے دولت اسلامیہ میں اپنےکئی گروپ بنا رکھے ہیں جن میں ’صابری جماعت‘ اور ’بخاری جماعت‘ سب سے نمایاں ہیں۔

اسی بارے میں