امریکہ میں 15 چینیوں پر امتحانی دھوکہ دہی کا الزام

تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption ملزمان نے اصل طلبہ کی جگہ ایس اے ٹی، ٹوفل اور جي آر اي کے امتحانات بھی دیے

امریکہ کے محکمۂ انصاف نے 15 چینی شہریوں پر یونیورسٹیوں میں داخلے کے امتحانات میں جعل سازی اور دھوکہ دہی کا الزام عائد کیا ہے۔

استغاثہ کے مطابق ان ملزمان نے اصل طلبہ کی جگہ امتحانات دینے کے لیے جعلی پاسپورٹ استعمال کیے۔

ان افراد پر الزام ہے کہ انھوں نے 2011 سے 2015 تک مغربی پینسلوینيا میں یہ دھوکہ دہی کی۔

ان ملزمان میں مرد اور خواتین دونوں شامل ہیں اور ان کی عمریں 19 سے 26 سال کے درمیان ہیں اور جرم ثابت ہونے پر انھیں 20 برس قید تک کی سزا ہو سکتی ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے حکام کے حوالے سے کہا ہے کہ یہ افراد ریاست ورجینیا کے شہر بلیكسبرگ اور میساچوسٹس کے شہر بوسٹن سمیت ان شہروں میں رہائش پذیر ہیں جہاں مشہور امریکی یونیورسٹیاں واقع ہیں۔

محکمۂ انصاف کا کہنا ہے کہ ملزمان نے اصل طلبہ کی جگہ امریکی یونیورسٹیوں میں داخلے کے سب سے اہم امتحان سكولیسٹك ایپٹچيوڈ ٹیسٹ (ایس اے ٹی) کے علاوہ ٹیسٹ آف انگلش ایز اے فارن لینگویج (ٹوفل) اور گریجویٹ ریکارڈ ایگزامینیشن (جي آر اي) کے امتحانات بھی دیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سكولیسٹك ایپٹچيوڈ ٹیسٹ امریکی کالجوں میں داخلہ حاصل کرنے کے لیے سب سے اہم امتحان ہے

پینسلوینيا کے اٹارنی ڈیوڈ ہِكٹن نے کہا: ’اس دھوکہ دہی سے جن لوگوں کو فائدہ پہنچتا تھا انھیں امریکہ کے نامی گرامی کالجوں میں داخلہ مل جاتا تھا۔‘

ساتھ ہی استغاثہ نے یہ بھی الزام لگایا پہ کہ ملزمان تعلیمی ویزوں کے سلسلے میں بھی فرضی چینی پاسپورٹوں کی مدد سے فراڈ کر رہے تھے۔

فلاڈیلفیا میں ہوم لینڈ سکیورٹی کے سپیشل ایجنٹ انچارج جان کیلیگن کے مطابق ’ان طلبہ نے نہ صرف جعل سازی سے یونیورسٹیوں میں جگہ بنائی بلکہ وہ ملک کے امیگریشن نظام کو بھی دھوکہ دے رہے تھے۔‘

مقامی اخبار کے مطابق امریکی حکام نے اس سلسلے میں میساچوسٹس کے رہائشی 24 سالہ سیوان ژاؤ اور پٹس برگ پینسلوینیا کے 24 سالہ ہان ٹونگ کو حراست میں لیا ہے۔

ہان کو اس معاملے میں مرکزی ملزم قرار دیا جا رہا ہے اور وہ اپنے دس ساتھیوں سمیت حکم ملنے پر عدالت میں پیش ہوں گے۔

اخبار میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اس معاملے کے تین ملزمان اس وقت چین میں ہیں اور عدالتی دستاویزات میں ان کے نام خفیہ رکھے گئے ہیں۔

مجرم پائے جانے پر ان تمام افراد کو 20 سال قید یا ڈھائی لاکھ ڈالر جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جا سکتی ہیں۔ اس کے علاوہ سازش رچنے کے الزام میں انھیں اس کے علاوہ پانچ سال تک قید ہو سکتی ہے۔

اسی بارے میں