نوجوانوں سے بُرا سلوک، سفیدفام امریکی پولیس اہلکار معطل

تصویر کے کاپی رائٹ YouTube
Image caption شہر کے میئر کا کہنا ہے کہ اس واقعے سے ان کی پریشانی اور خدشات میں اضافہ ہوا ہے

امریکی ریاست ٹیکسس میں نوجوانوں کے ایک گروپ سے ’بدسلوکی‘ کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد ایک سفید فام پولیس اہلکار کو معطل کر دیا گیا ہے۔

اس گروپ میں زیادہ تر سیاہ فام نوجوان شامل تھے جو ایک سوئمنگ پول کے نزدیک جمع تھے۔

آن لائن شائع کی جانے والی اس ویڈیو میں اس پولیس اہلکار کو دو لڑکوں پر پستول تانتے اور ایک 14 سالہ لڑکی کو زمین پر گراتے دیکھا جا سکتا ہے۔

یہ واقعہ ڈیلس کے نواحی علاقے میک کینی میں پیش آیا اور پولیس اہلکار جائے وقوع پر مقامی افراد کی جانب سے اس شکایت کے بعد پہنچا تھا کہ تیراکی کے ایک تالاب کے پاس کچھ گڑبڑ ہے۔

میک کینی پولیس کے سربراہ کا کہنا ہے کہ وہ اس واقعے کی تحقیقات کر رہے ہیں اور متعلقہ اہلکار کو انتظامی رخصت پر بھیج دیا گیا ہے۔

شہر کے میئر کا کہنا ہے کہ اس واقعے سے ان کی پریشانی اور خدشات میں اضافہ ہوا ہے۔

یہ ویڈیو ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب امریکہ میں پہلے ہی سیاہ فام آبادی کی جانب سے متعدد بار پولیس پر بےجا تشدد کے الزامات عائد کیے جا چکے ہیں۔

رواں برس امریکی پولیس کے ہاتھوں کئی غیر مسلح سیاہ فام باشندوں کی ہلاکتوں سے مختلف امریکی شہروں میں شدید عوامی ردعمل بھی سامنے آیا اور مظاہرے کیے گئے۔

امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ نے حال ہی میں اپنی رپورٹ میں کہا تھا کہ امریکی حکام کے اعداد و شمار کے برعکس ملک میں پولیس کے ہاتھوں روزانہ دو سے زائد افراد مارے جاتے ہیں اور ان میں اکثریت سیاہ فام شہریوں کی ہے۔

واشنگٹن پوسٹ کی جانب سے جمع کیے جانے والے اعداد و شمار کے مطابق رواں سال کے پہلے پانچ ماہ کے دوران ملک میں پولیس کے ہاتھوں 385 افراد مارے گئے۔

اسی بارے میں