نیویارک کی جیل سے قیدیوں کا فرار ’بحرانی صورتحال‘ ہے

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption پولیس تحقیقات کر رہی ہے کہ قیدیوں نے جیل کاٹنے کے لیے آلات کہاں سے حاصل کیے

امریکی ریاست نیویارک کی ایک انتہائی حساس سکیورٹی والی جیل سے قتل کے دومجرموں کے فرار کو ریاست کے گورنر نے بحرانی صورت حال قرار دیا ہے۔

48 سالہ رچرڈ میٹ کو اغوا اور قتل کے جرم میں عمر قید ہو تھی اور 34 سالہ ڈیوڈ سویٹ کو ایک پولیس افسر کو قتل کرنے پر سزا سنائی گئی تھی۔ ان دونوں نے ڈینومورا میں واقع جیل سے فرار کے لیے جدید برقی آلات سے سٹیل کی دیوار کاٹی تھی۔

گورنر اینڈریو کوومو کا کہنا ہے کہ ’یہ خطرناک لوگ ہیں اور سنگین جرائم کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔‘

فرار قیدیوں کے متعلق معلومات فراہم کرنے والے کے لیے ریاست نے ایک لاکھ ڈالر کے انعام کا اعلان کیا ہے۔

گورنر کوومو کے مطابق اس جیل سے گذشتہ ڈیڑھ سو برسوں میں یہ فرار کا پہلا واقعہ ہے۔

نیویارک پوسٹ کے مطابق قدیوں نے برقی آلات کی مدد سے پہلے حوالات کی سٹیل سے بنی ہوئی دیوار کاٹی اور پھر زیرِ زمین پائپوں کے راستے قریبی سڑک پر واقع مین ہول سے باہر نکل کر فرار ہو گئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ na
Image caption قدیوں نے برقی آلات کی مدد سے حوالات کی سٹیل سے بنی ہوئی دیوار کاٹی

جمعے کی رات کو فرار ہونے والے قیدیوں نے جیل حکام کو دھوکہ دینے کے لیے بستر ایسے تر تیب دیے ہوئے تھے کہ ان کو دیکھ کر ایسے لگتا تھا کہ جیسے وہ اپنے بستر پر سو رہے ہوں۔

واضح رہے کہ جیل حکام کو قدیوں کے فرار کے بارے میں اگلی صبح پتہ چلا تھا۔

گورنر کوومو کا کہنا ہے کہ کسی نہ کسی نے تو ان کے فرار کی کوشش کی آواز سنی ہوگی اور جب ان کو دوبارہ گرفتار کیا جائے گا تو اس حوالے سے مکمل تحقیقات کی جائیں گی۔

’ ہم تفصیل سے اس بات کا جائزہ لیں گے کہ انھوں نے کیا کیا اور کیسے کیا تا کہ دوبارہ ایسا واقعہ رونما نہ ہو۔‘

پولیس تحقیقات کر رہی ہے کہ قیدیوں نے جیل کاٹنے کے لیے آلات کہاں سے حاصل کیے۔

دو سو سے زائد پولیس افسران سراغ رساں کتوں اور ہیلی کوپٹروں کی مدد سے مفرور قیدیوں کو تلاش کر رہے ہیں۔

اسی بارے میں